پاناما کیس، حسین نواز کی تصویر لیک ہونے پر جے آئی ٹی سے جواب طلب

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے پاناما پیپرز کیس میں تحقیقات سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران حسین نواز کی تصویر لیک ہونے پر جے آئی ٹی سے جواب طلب کرلیا۔ جسٹس اعجاز افضل کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی خصوصی بینچ نے پاناما کیس کی تحقیقات میں پیش رفت سے متعلق کیس کی سماعت کی، سماعت کے دوران جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیا نے اب تک ہونے والی پیش رفت پر مشتمل رپورٹ پیش کی۔
سماعت کے دوران حسین نواز کے وکیل خواجہ حارث نے اپنے موکل کی تصویر لیک ہونے کا معاملہ اٹھا دیا۔ انہوں نے کہا کہ وڈیو ریکارڈنگ کی کسی قانون میں اجازت نہیں،اس سے پیش ہونے والے پر دباؤ بڑھتاہے۔ تصویر لیک ہونے کی ذمے دار جے آئی ٹی ہے۔ خواجہ حارث کی بات پر جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ حسین نواز کی تصویر اسکرین شاٹ ہے۔ وڈیو ریکارڈنگ نہیں۔ جسٹس اعجاز افضل نے کہا کہ اس معاملے پر جے آئی ٹی کو سن لیتے ہیں۔ تحقیقات کی ضرورت ہوئی تو دیکھیں گے۔
سپریم کورٹ نے تحریری حکم نامہ جاری کرتے ہوئے جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیا کو ہدایت کی کہ تحقیقات درست سمت میں جا رہی ہیں، آپ کو تمام تحقیقات مقررہ وقت میں مکمل کرنا ہیں، اس ٹائم فریم پر کوئی سمجھوتہ نہیں کریں گے اور مقررہ وقت میں ایک دن کے اضافے کی بھی اجازت نہیں دیں گے، پہلی رپورٹ میں آپ نے مشکلات کا ذکر کیا ہے، تمام حقائق پر مشتمل نئی درخواست دیں اور اس میں تمام مشکلات شامل کریں، درخواست پر اٹارنی جنرل کو ہدایات جاری کریں گے۔

یہ بھی پڑھیں

ایف بی آر, كی جانب سے, نوٹیفکیشن, بھی جاری, کردیا گیا

ایف بی آر كی جانب سے نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا گیا

اسلام آباد: بینكوں كو یومیہ پچاس ہزار روپے سے زائد اور ایک ماہ میں دس …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے