افغانستان میں کوئی گروہ فیورٹ نہیں ہے، ہم سب سے یکساں سلوک کے حامی ہیں

افغانستان میں کوئی گروہ فیورٹ نہیں ہے، ہم سب سے یکساں سلوک کے حامی ہیں

اسلام آباد: ملاقات میں دو طرفہ تعلقات، باہمی تجارت اور خطے کی معاشی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا گیا، شاہ محمود نے کہا پاکستان افغانستان سے تاریخی دوستانہ تعلقات کو اہمیت دیتا ہے، حکومت وزیر اعظم کی قیادت میں افغان عوام کے لیے مثبت سوچ رکھتی ہے

وزیر خارجہ پاکستان نے افغان اولسی جرگے کے وفد سے ملاقات کے دوران کیا، افغان پارلیمانی وفد کی قیادت اسپیکر رحمان رحمانی کر رہے تھے۔
وزیر خارجہ کا منصب سنبھالنے کے بعد انھوں نے پہلا دورہ ہی افغانستان کا کیا تھا، شاہ محمود نے وفد سے کہا میری طرف سے 10 نکاتی واضح پیغام افغان پارلیمنٹ کو دیں، افغانستان میں ہمارا کوئی گروہ فیورٹ نہیں سب سے یکساں سلوک کے حامی ہیں، ہم متحد افغانستان کی خود مختاری اور علاقائی سالمیت کا احترام اور خواہش رکھتے ہیں۔
پر امن، مستحکم اور خوش حال افغانستان، پاکستان کے مفاد میں ہے، ہمیں دو طرفہ تجارت اور معیشت کے مواقع سے استفادہ کرنا چاہیے، وزیر اعظم اور حکومت نے ہمیشہ یہی کہا افغان مسئلے کا کوئی فوجی حل ممکن نہیں، اس لیے افغان امن عمل میں مصالحانہ کردار ادا کیا۔
شاہ محمود کا کہنا تھا کہ امریکا اور طالبان میں امن معاہدے کے موقع سے بھرپور استفادہ کرنا چاہیے، افغان مذاکرات طویل اور پیچیدہ ہو سکتے ہیں، اس لیے فریقین صبر کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں، بین الافغان مذاکرات کا نتیجہ خیز ہونا نہایت ضروری ہے۔
پاکستان افغان عوام کی رائے کا صدق دل سے احترام کرتا ہے، پاکستان افغان مذاکرات میں افغان قیادت کے فیصلوں کا بھی احترام کرے گا، پاکستان سے زیادہ کوئی ملک افغانستان میں مستقل قیام امن کا خواہاں نہیں ہو سکتا۔

یہ بھی پڑھیں

26نومبر سے 24دسمبر تک پاکستان کے تمام تعلیمی ادارے بند کرنے کااعلان

26نومبر سے 24دسمبر تک پاکستان کے تمام تعلیمی ادارے بند کرنے کااعلان

اسلام آباد: بین الصوبائی وزرائےتعلیم کااجلاس کے بعد وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود اور معاون …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے