لیڈی ہیلتھ ورکرز کا پارلیمنٹ کی جانب مارچ کرنے کا اعلان

لیڈی ہیلتھ ورکرز کا پارلیمنٹ کی جانب مارچ کرنے کا اعلان

اسلام آباد: ڈی چوک پر لیڈی ہیلتھ ورکرز کا دھرنا چھٹے روز بھی جاری ہے پولیس نے دھرنے کی طرف جانے والے تمام راستے کنٹینر اور خاردار تاروں سے سیل کردیے ہیں

پولیس نے مزید لیڈی ہیلتھ ورکرز کو دھرنے کی طرف آنے سے روکنے کی کوشش کی تو ہیلتھ ورکرز اشتعال میں آگئیں اور ان کے پولیس کے ساتھ جھڑپ ہوئی اور ہیلتھ ورکرز نے پولیس کی سیفٹی کٹس کو کھینچ کر پھینک دیا۔
اس دوران دھکا لگنے سے ایک ورکر زخمی ہوگئی۔ لیڈی ہیلتھ ورکرز نے حکومت اور پولیس کے خلاف شدید نعرے بازی کرتے ہوئے پولیس پر ڈی چوک جانے سے روکنے کا الزام لگایا۔ دھرنے کے باعث اسلام آباد میں میٹرو بس سروس بھی معطل کردی گئی۔
لیڈی ہیلتھ ورکرز نے حکومت کو مطالبات پورے کرنے کےلیے ایک اور ڈیڈ لائن دیتے ہوئے آج پارلیمنٹ کی جانب مارچ کرنے کا اعلان کردیا۔ صدر لیڈی ہیلتھ ورکر رخسانہ انور کا کہنا ہے کہ آج کوئی بھی رکاوٹ ہمیں روک نہیں سکتی۔

یہ بھی پڑھیں

26نومبر سے 24دسمبر تک پاکستان کے تمام تعلیمی ادارے بند کرنے کااعلان

26نومبر سے 24دسمبر تک پاکستان کے تمام تعلیمی ادارے بند کرنے کااعلان

اسلام آباد: بین الصوبائی وزرائےتعلیم کااجلاس کے بعد وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود اور معاون …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے