جہانگیر ترین کی ایف آئی اے کے سامنے پیش ہونے سے معذرت

جہانگیر ترین کی ایف آئی اے کے سامنے پیش ہونے سے معذرت

اسلام آباد: ایف آئی اے کی جانب سے شوگر اسکینڈل میں تحقیقات کے لیے جہانگیر ترین اور ان کے بیٹے علی ترین کو تمام دستاویزات سمیت طلب کیا گیا تھا

علی ترین نے ایف آئی اے کو بتایا کہ والد کی تیماداری کے لیے لندن میں موجود ہوں اور ایف آئی اے کے سوالات کا جواب دینے کے لیے وقت درکار ہے۔
اب جہانگیر ترین نے بھی ایف آئی اے کو اپنا تحریری جواب جمع کرا دیا ہے۔
جہانگیر ترین کی جانب سے ایف آئی اے کو جمع کرائے گئے تحریری جواب میں بتایا گیا ہے کہ اس وقت لندن میں زیر علاج ہوں، ذاتی طور پر ایف آئی اے کے سامنے پیش نہیں ہو سکتا۔
پی ٹی آئی رہنما نے ایف آئی اے کو یہ بھی لکھا کہ سوالات کے جواب کے لیے مناسب وقت درکار ہے۔
چینی بحران پر وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کی تحقیقاتی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا تھاکہ ملک میں چینی بحران کا سب سے زیادہ فائدہ حکمران جماعت کے اہم رہنما جہانگیر ترین نے اٹھایا، دوسرے نمبر پر وفاقی وزیر خسرو بختیار کے بھائی اور تیسرے نمبر پر حکمران اتحاد میں شامل مونس الٰہی کی کمپنیوں نے فائدہ اٹھایا۔
چینی بحران رپورٹ سامنے آنے کے بعد جہانگیر ترین نے اپنے اوپر لگے الزامات کو مسترد کیا اور وفاقی وزیر خسرو بختیار کی وزارت بھی تبدیل کر دی گئی۔

یہ بھی پڑھیں

پارلیمنٹ حملہ کیس سےمتعلق درخواست کا فیصلہ 29 اکتوبر کو سنانے کا امکان

پارلیمنٹ حملہ کیس سےمتعلق درخواست کا فیصلہ 29 اکتوبر کو سنانے کا امکان

اسلام آباد: اے ٹی سی جج رانا جواد عباس حسن نے درخواست کی سماعت کے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے