شامی پناہ گزینوں کے معاملے پر امریکی صدر ٹرمپ اور ان کی بیٹی آمنے سامنے

واشنگٹن: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے برعکس ان کی بیٹی ایوانکا ٹرمپ کا اصرار ہے کہ شامی پناہ گزینوں کو امریکہ میں داخلے کی اجازت دینے کے معاملے پر بات چیت ہونی چاہیے اور پناہ گزینوں کے معاملے کو بات چیت کے ذریعہ حل کرنا چاہیے۔ امریکی خبر رساں ادارے این بی سی کے  مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے برعکس ان کی بیٹی ایوانکا ٹرمپ کا اصرار ہے کہ شامی پناہ گزینوں کو امریکہ میں داخلے کی اجازت دینے کے معاملے پر بات چیت ہونی چاہیے اور پناہ گزینوں کے معاملے کو بات چیت کے ذریعہ حل کرنا چاہیے۔امریکی نیوز چینل این بی سی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا، میرا خیال ہے کہ پوری دنیا کو اس وقت انسانی بحران کا سامنا ہے اور ہم سب کو مل کر اس مسئلے کو حل کرنا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا، ‘پناہ گزینوں کے لیے امریکی سرحدیں کھولنا بات چیت کا حصہ ہونا چاہیے لیکن صرف یہی کافی نہیں ہے۔واضح  رہے کہ امریکی صدر نے حال ہی میں شامی پناہ گزینوں کے امریکہ میں داخلے پر پابندی عائد کرنے کے حوالے سے ایگزیکٹو آرڈرز جاری کیے تھے، جس میں کہا گیا تھا کہ یہ پناہ گزین امریکی سلامتی کے لیے خطرہ ہیں، تاہم امریکی وفاقی عدالت نے اس پابندی کو مسترد کرتے ہوئے اس فیصلے کو غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کر دیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں

ملائیشیا میں ہندوﺅں کو بھارت کی مسلمان اقلیت کے مقابلے 100 گنا زیادہ حقوق حاصل ہیں

ملائیشیا میں ہندوﺅں کو بھارت کی مسلمان اقلیت کے مقابلے 100 گنا زیادہ حقوق حاصل ہیں

کوالالمپور: ذاکر نائیک گزشتہ 3 سالوں سے ملائیشیا میں رہائش پذیر ہیں جبکہ بھارت میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے