ہر طرف غیر قانونی تعمیرات اور کچرا نہ اٹھانے کی وجہ سے کراچی ڈوب گیا

ہر طرف غیر قانونی تعمیرات اور کچرا نہ اٹھانے کی وجہ سے کراچی ڈوب گیا

کراچی: جسٹس خادم حسین شیخ کا کہنا تھا کہ کراچی کا ڈوبنا بڑا المیہ ہے اور کسی کو احساس ہی نہیں، کسی نے دیکھا کراچی میں گاڑیاں بارش کے پانی میں ڈوبی ہوئی تھیں، لوگ گھروں سے اپنے بچوں کو نہیں نکال پا رہے تھے

سندھ ہائیکورٹ میں گندگی اورپانی کے نکاس سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی اس دوران جسٹس خادم حسین شیخ ڈسٹرکٹ سینٹرل سے کچرا نہ اٹھانے اور برسات کے بعد شہر میں نکاسی آب کا نظام متاثر ہونے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہر طرف غیر قانونی تعمیرات اور کچرا نہ اٹھانے کی وجہ سے کراچی ڈوب گیا، ہر ادارہ ایک دوسرے پر ذمہ داری ڈالتا ہے۔
برسات میں لوگوں کے گھر اور سامان سب تباہ ہوگیا، کیا ہم میں سے کوئی بارش کے بعد گندے پانی میں جا سکے گا۔
سرکاری وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ڈسٹرکٹ سینٹرل سے کچرا اٹھانے کی کے ایم سی اور سالڈ ویسٹ مینجمنٹ کی ذمہ داری ہے جس پر وکیل درخواست گزار نے جواب دیا کہ جھوٹ بولا جارہا ہے ڈسٹرکٹ سینٹرل میں سالڈ ویسٹ مینجمنٹ کو کچرا اٹھانے کی ذمہ داری نہیں دی گئی۔
عدالت نے صوبائی حکومت اور بلدیاتی اداروں پر برہم کا اظہار کیا اور ڈائریکٹر کے ایم سی اور میئر کراچی کے دفتر سے ذمہ دار افسر کو فوری طور پر طلب کرلیا۔
جسٹس خادم حسین شیخ نے صوبائی حکومت کے وکیل سے استفسار کیا کہ الائیشوں کو عید قرباں پر ٹھکانے لگانے کے لیے کیا بندو بست ہے جس پر سرکاری وکیل نے جواب دیا کہ حکومت نے متعلقہ اداروں کو فنڈ فراہم کرنے ہیں، الائیشوں کو ٹھکانے لگانے کا بندوبست کیا جائے گا۔ جسٹس خادم حسین نے کہا کہ حکومت کو کام کرنے سے پہلے فنڈز کی فکر ہوتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

سی فوڈ ریسٹورنٹس نے حکومت سندھ کی کورونا ایس اوپیز کو مذاق بنادیا

سی فوڈ ریسٹورنٹس نے حکومت سندھ کی کورونا ایس اوپیز کو مذاق بنادیا

کراچی: رات گئے تک ان سی فوڈ کے ریسٹورنٹس پر شہریوں کارش نظر آتا ہے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے