کیرالہ میں متحدہ عرب امارات کے قونصل خانے کے نام پارسل سے 30 کلو سونا برآمد

کیرالہ میں متحدہ عرب امارات کے قونصل خانے کے نام پارسل سے 30 کلو سونا برآمد

انڈیا: جنوبی ریاست کیرالہ کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر موجود کسٹم حکام نے باتھ روم فٹنگز کے اندر چھپایا گیا سونا برآمد کیا جو بظاہر سمگل کیا گیا ہے

یہ پارسل تھیرووننتھاپورم شہر میں متحدہ عرب امارات کے قونصل خانے کے نام پر تھا۔
متحدہ عرب امارات نے اس پارسل سے لاعلمی کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ ایک سابق مقامی ملازم کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔
مقامی میڈیا میں آنے والی اطلاعات کے مطابق ایک اور شخص کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔
متحدہ عرب امارات کے دلی میں سفارت خانے نے ٹوئٹر پر اپنے ایک پیغام میں کہا کہ اس حوالے سے تحقیقات کی جا رہی ہیں کہ یہ پارسل کس نے بھیجا۔
سفارت خانے کا کہنا تھا کہ ‘اماراتی حکام نے زور دیا ہے کہ ملوث افراد جنھوں نے نہ صرف ایک سنگین جرم کیا ہے بلکہ انڈیا میں اماراتی مشن کی ساکھ خراب کرنے کی بھی کوشش کی، انھیں نہیں چھوڑا جائے گا۔’
پیغام میں کہا گیا کہ ‘ہم انڈین حکام کے ساتھ اس جرم کی جڑ تک پہنچنے میں تعاون کے لیے پرعزم ہیں۔’
انڈیا میں متحدہ عرب امارات کے سفیر نے اخبار گلف نیوز کو بتایا کہ قونصل خانے کے سابق ملازم کو ‘اپنا کام نہ کرنے پر’ کئی ماہ قبل ملازمت سے برخ ست کر دیا گیا تھا۔
ریاست کیرالہ کے وزیرِ اعلیٰ پینارائے وجین پر اپوزیشن کی جانب سے مستعفی ہونے کے لیے دباؤ ڈالا جا رہا ہے تاہم انھوں نے اس واقعے میں ملوث ہونے سے انکار کیا ہے۔ اس ریاست کے ایک سینیئر عہدیدار کو ان کے عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے۔
کورونا وائرس کے باعث بین الاقوامی پروازوں کی تعداد میں کمی نے انڈیا میں سمگلنگ کے ذریعے سونے کی آمد کو زک پہنچائی ہے اور سونے کی قیمت میں اضافہ ہوا ہے۔
ورلڈ گولڈ کونسل کے انڈین معاملات کے سربراہ سوماسندرم پی آر نے روئٹرز کو بتایا کہ ‘حالیہ صورتحال میں متوقع ہے کہ سمگلنگ میں خاصی کمی آئے گی۔ لاک ڈاؤن کے دوران سامان کی سمگلنگ شدید متاثر ہوئی تھی۔’
انھیں توقع ہے کہ سال 2019 میں 115 سے 120 ٹن سمگل شدہ سونے کی انڈیا آمد کے مقابلے میں رواں سال اس کا حجم کافی کم رہے گا۔

یہ بھی پڑھیں

انسانی صحت کو کرونا وائرس سے بچانے کے لیے 92 فی صد مؤثر ہے

انسانی صحت کو کرونا وائرس سے بچانے کے لیے 92 فی صد مؤثر ہے

ماسکو: ہنگری نے کرونا وائرس سے بچاؤ کے لیے روس میں تیار کی جانے والی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے