پڑوسی ملک روس نے مہلک بیماری سے بچنے کے لیے ایکشن لینا شروع کردیا

پڑوسی ملک روس نے مہلک بیماری سے بچنے کے لیے ایکشن لینا شروع کردیا

ماسکو :  13ویں صدی کے ببونک طاعون نے ایک بار پھر سر اٹھانا شروع کردیا ہے، ماہرین کا ماننا ہے کہ یہ بیماری گلہری اور چوہے کی طرح نظر آنے والے ’مارموٹ‘ نامی جانور سے پھیلتی ہے

اسی کے پیش نظر روس نے چین اور منگولیا سے منسلک بارڈرز پر مارموٹ کے شکار کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا آغاز کردیا ہے۔ خیال رہے کہ چین اور منگولیا میں شہریوں کی بڑی تعداد مارموٹ کا گوشت شوق سے کھاتی ہے۔
جبکہ چین ببونک طاعون کے باعث شہریوں کو مارموٹ کے شکار اور کھانے سے خبردار کرچکا ہے۔
ببونک طاعون کے کیسز اس سے قبل بھی سامنے آتے رہے ہیں۔ سنہ 2017 میں مڈغاسکر میں طاعون کے 300 کیس سامنے آئے تھے۔ گزشتہ سال مئی میں منگولیا میں ہی مارموٹ نامی جانور کھانے کے بعد 2 افراد اس مرض کا شکار ہو کر ہلاک ہوگئے۔

یہ بھی پڑھیں

نائب افغان صدر کے قافلے پر بم حملہ ہوا جس کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک

نائب افغان صدر کے قافلے پر بم حملہ ہوا جس کے نتیجے میں 10 افراد ہلاک

کابل: آج صبح افغانستان کے دارالحکومت کابل میں سڑک کنارے بم دھماکے کے نتیجے میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے