نواز شریف کو العزیزیہ ریفرنس میں سزا سنانے والے جج نوکری سے برطرف

نواز شریف کو العزیزیہ ریفرنس میں سزا سنانے والے جج نوکری سے برطرف

لاہور: لاہور چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ محمد قاسم خان کی زیر صدارت انتظامی کمیٹی نے جمعے کو ارشد ملک کی نوکری سے برطرفی کی منظوری دی ہے

اس اجلاس میں لاہور ہائیکورٹ کے سات سینیئر ججوں جسٹس ملک شہزاد احمد خان، جسٹس شجاعت علی خان، جسٹس عائشہ اے ملک، جسٹس شاہد وحید اور جسٹس علی باقر نجفی نے شرکت کی۔
ارشد ملک نے دسمبر 2018 میں سابق وزیر اعظم نواز شریف کو العزیزیہ سٹیل مل کے مقدمے میں سات سال قید کی سزا سنائی تھی۔ اس فیصلے کے بعد سابق حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز کی نائب صدر مریم نواز نے ان کی ایک مبینہ ویڈیو جاری کی تھی جس میں انھیں کہتے ہوئے سنا گیا کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف کو العزیزیہ سٹیل ملز کے مقدمے میں سزا دینے کے لیے ان پر دباؤ تھا۔
اس معاملے کے سامنے آنے کے بعد اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ارشد ملک کو ان کے مس کنڈکٹ کی وجہ سے احتساب عدالت کے جج کے طور پر کام کرنے سے روکتے ہوئے اُنھیں لاہور ہائی کورٹ رپورٹ کرنے کا حکم دیا تھا۔
ارشد ملک ڈیپوٹیشن پر اسلام آباد میں تعینات ہوئے اور وہ لاہور ہائی کورٹ کے ہی ماتحت تھے۔
مذکورہ جج کی ویڈیو منظر عام آنے کے بعد پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے اُنھیں واپس لاہور ہائی کورٹ بھیجنے کی بجائے وفاقی وزارت قانون میں بطور او ایس ڈی رکھ لیا تھا جس پر سپریم کورٹ نے برہمی کا اظہار کیا تھا۔
سابق چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے اس ویڈیو کے بارے میں درخواست کی سماعت کے دوران کہا تھا کہ ججز کے ’سر شرم سے جھک‘ گئے ہیں۔
ویڈیو سامنے آنے کے بعد ارشد ملک نے ایک بیانِ حلفی دیا تھا جس میں انھوں نے نواز شریف کے بیٹے سے ملاقات کا اعتراف کیا تھا۔
پاکستان کی سپریم کورٹ نے بھی اس معاملے پر فیصلے میں کہا تھا کہ ارشد ملک نے جو بیان حلفی جمع کروایا تھا وہ دراصل ان کا اعترافِ جرم تھا۔
فیصلے میں کہا گیا تھا کہ اُنھوں نے اپنے بیان حلفی میں مجرم نواز شریف کے بیٹے کے ساتھ ملاقات کا اعتراف کیا ہے اور اس پیش رفت کے بعد احتساب عدالت کے سابق جج نے اس سے متعلق اعلی حکام کو نہ ہی آگاہ کیا اور نہ ہی وہ خود عدالتی کارروائی سے الگ ہوئے۔
سپریم کورٹ نے اس معاملے میں یہ بھی کہا تھا کہ چونکہ ارشد ملک لاہور ہائیکورٹ کے ماتحت ہیں اس لیے وہی ان کے خلاف کارروائی کا اختیار رکھتی ہے۔
اس معاملے پر بات کرتے ہوئے لاہور ہائی کورٹ کے سابق جج شاہ خاور کا کہنا ہے کہ لاہور ہائی کورٹ کی انضباطی کمیٹی کے فیصلے کے بعد ارشد ملک کی طرف سے دیے گئے فیصلوں پر اب سوالیہ نشان لگ گیا ہے۔
جج کے فیصلوں سے متاثرہ شخص/اشخاص اگر اعلی عدالتوں میں جانا چاہیں تو انُھیں وہاں سے ریلیف ملنے کا امکان ہے۔
اُنھوں نے کہا کہ مذکورہ جج کے فیصلے کے خلاف سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف نے جو اپیل اسلام اباد ہائی کورٹ میں دائر کر رکھی ہے اس میں وہ اس فیصلے کے قانونی نکات کی بجائے پہلے جج کے کردار کو زیر بحث لے کر آئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

نوازشریف اور مریم نواز کے خلاف مقدمات بالکل واضح ہیں

نوازشریف اور مریم نواز کے خلاف مقدمات بالکل واضح ہیں

 اسلام آباد: نیب نے مریم نواز کو آج طلب کیا تھا تاہم مسلم لیگ (ن) …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے