گریڈ ایک سے 16 تک کی ہزاروں اسامیوں کو ختم کرنے کے عمل کا آغاز کردیا

گریڈ ایک سے 16 تک کی ہزاروں اسامیوں کو ختم کرنے کے عمل کا آغاز کردیا

اسلام آباد: فیصلہ حکومت کے عالمی قرض دہندہ اداروں بشمول عالمی بینک کے ساتھ ’وفاقی حکومت کی تنظیم نو اور رائٹ سائزنگ کے لیے‘ کیے گئے وعدے کا حصہ ہے تا کہ سول حکومت پر اٹھنے والے اخراجات کو قابو کیا جاسکے

وزارت خزانہ نے اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے سیکریٹری کو ’تمام وزارتوں، ڈویژنز اور حکومتی محکموں میں ایک سال سے زائد عرصے سے خالی گریڈ ایک سے 16 کی خالی اسامیوں کو ختم کرنے کے لیے‘ کابینہ عملدرآمد کمیٹی کے فیصلے کے مطابق کارروائی کرنے کی ہدایت کردی۔
خط میں کہا گیا کہ وزیراعظم عمران خان اور عالمی بینک کی خواہش ہے کہ غیر ضروری اخراجات کو محدود رکھنے کے لیے حکومتی مشینری کو صحیح حجم میں اور اسمارٹ ہونا چاہیئے۔
وفاقی حکومت میں 6 لاکھ 80 ہزاراسامیاں منظور شدہ ہیں لیکن اس میں سے 80 ہزار سے زائد ایک سال سے زائد عرصے سے خالی ہیں۔
اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کو بھیجے گئے خط میں وزارت خزانہ کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت کے ملازمین کی تعداد ’گزشتہ ایک دہائی کے عرصے میں مسلسل بڑھی ہے اور اس کی وجہ سے سالانہ تنخواہوں کا بل 3 گنا بڑھ چکا ہے جبکہ پینشن کا بل بھی ناقابلِ انتظام ہوگیا ہے‘۔
خیال رہے کہ رواں مالی سال میں وفاقی حکومت کا پینشن بل 4 کھرب 70 ارب روپے رہنے کا تخمینہ لگایا گیا ہے جس میں فوجی اہلکاروں کی پینشن کا حجم 3 کھرب 70 ارب روپے ہے۔
اس کے مقابلے رواں مالی سال کے دوران وفاقی حکومت چلانے کا مجموعی خرچہ 4 کھرب 75 ارب روپے رہنے کا تخمینہ ہے۔
’وفاقی حکومت کا ڈھانچہ ناہموار ہے اور 95 فیصد ملازمین ایک سے 16 گریڈ کے ہیں جو سیلری بل کا 85 فیصد حصہ حاصل کرتے ہیں‘۔ادھر عالمی بینک کا ماننا ہے کہ یہ معاون عملہ جدید حکومتی مشینری کی مجموعی تعداد کے 50 فیصد سے زائد نہیں ہونا چاہیئے۔
وزیراعظم عمران خان کے مشیر برائے سادگی اور اداراہ جاتی اصلاحات ڈاکٹر عشرت حسین نے بتایا کہ مشاہدے میں یہ بات سامنے آئی کہ منظور شدہ اسامیوں اور ان پر کام کرنے والے ملازمین کی حقیقی تعداد میں 12 سے 13 فیصد کا ’فل گیپ‘ موجود ہے۔
اس کا مطلب یہ کہ منظور شدہ اسامیوں میں سے 84 سے 85 فیصد بھری رہتی ہیں جبکہ بقیہ اسامیاں خالی ہیں۔
ڈاکٹر عشرت حسین کا مزید کہنا تھا کہ ان گریڈز کی 71 ہزاراسامیاں 2 سے 3 سال کے عرصے سے خالی پڑی ہیں اس لیے حکومت نے ان اسامیوں کو منجمد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔
ان اسامیوں پر اب کوئی بھرتی نہیں کی جائے گی تاہم اہم پبلک سروسز مثلاً سماجی شوبے میں گریڈ ایک سے 16 کی اسامیاں بڑھائی جائیں گی۔

یہ بھی پڑھیں

نوازشریف اور مریم نواز کے خلاف مقدمات بالکل واضح ہیں

نوازشریف اور مریم نواز کے خلاف مقدمات بالکل واضح ہیں

 اسلام آباد: نیب نے مریم نواز کو آج طلب کیا تھا تاہم مسلم لیگ (ن) …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے