پاکستانی اور افغان تجارت کی اہم راہداری دوبارہ کھولنے پر رضا مند ہوگئے

پاکستانی اور افغان تجارت کی اہم راہداری دوبارہ کھولنے پر رضا مند ہوگئے

اسلام آباد: پاکستان میں افغان سفیر عاطف مشال نے تصدیق کی تھی کہ پاکستان اگلے پیر سے غلام خان گزر گاہ کھولنے پر رضا مند ہوگیا ہے

غلام خان گزر گاہ کو درآمدات وبرآمدات کے لئے کھول دیا جائے گا جو کہ دونوں ملکوں کے درمیان باہمی تجارت کی تیسری بڑی راہداری بن جائے گی ۔
پاکستان نے جون 2014میں شمالی وزیرستان کے قبائلی ضلع میں غلام خان سرحد اس وقت بند کردی تھی جب فوج نے اس علاقے میں موجود پاکستانی اور غیر ملکی شدت پسندوں کے خلاف ایک بڑی کارروائی کا آغاز کردیا تھا جبکہ مارچ 2018 میں سر حدی گزر گاہ کو تجرباتی بنیادوں پر دوبارہ کھول دیا گیا تھا۔
افغان تاجر اپنے تازہ پھلوں کو خیبر پختونخوا اور بلوچستان کے صوبوں میں طورخم اور چمن کی دیگر سرحدی گزر گاہوں کے ذریعے برآمد کرسکیں گے۔
تازہ پھلوں اور سبزیوں کی افغان برآمدات کے لئے عروج کا موسم ہے جبکہ دونوں اب برآمد کے لئے تیار ہے۔

یہ بھی پڑھیں

نیپرا بجلی کے نرخوں میں ایک روپے 62 پیسے اضافے کی منظوری

نیپرا بجلی کے نرخوں میں ایک روپے 62 پیسے اضافے کی منظوری

اسلام آباد: نیپرا کے ایک ترجمان نے کہا کہ ریگولیٹر کے نئے نرخ وفاقی حکومت …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے