حکومت کو کچھ افراد کو ’فوائد‘ پہنچانے کے لیے معاہدے میں ترمیم نہیں کرنی چاہیئے

حکومت کو کچھ افراد کو ’فوائد‘ پہنچانے کے لیے معاہدے میں ترمیم نہیں کرنی چاہیئے

اسلام آباد: سینیٹر فاروق ایچ نائیک کی سربراہی میں کمیٹی نے سیکریٹری بحری امور کو گوادر فری زون کے کانٹریکٹرز اور سب کانٹریکٹرزکے نام بتانے کے لیے مہلت دے دی جنہیں 40 سال کی مدت کے لیے ڈیوٹی سے استثنٰی دینے پر غور کیا جارہا تھا

سیکریٹری بحری امور نے استثنٰی کا جواز پیش کرنے کی کوشش کی لیکن کمیٹی اراکین اس سے مطمئن نظر نہیں آئے اور سینیٹر محسن عزیز کی نشاندہی پر کمیٹی نے سیکریٹری کو کانٹریکٹرز اور سب کانٹریکٹرز کے نام پیش کرنے کی ہدایت کی۔
سیکریٹی بحری امور کو سنگاپورین کمپنی کے ساتھ 2007 میں گوادر بندرگاہ کے انتظام و انصرام کا معاہدہ پیش کرنے کی بھی ہدایت کی گئی، مذکورہ کمپنی کو 2013 میں ایک چینی کمپنی کو بیچ دیا گیا تھا۔
سینیٹر فاروق ایچ نایئک نے کہا کہ ’ہمیں دونوں حقیقی معاہدے کی نقول درکار ہیں‘۔
کانٹریکٹرز اور سب کانٹریکٹرز کے ناموں کے علاوہ کمیٹی نے ان کی ملکیت، قومی اسمبلی میں گوادر بندرگاہ فری زون کے لیے ٹیکس استثنیٰ مسترد کرنے والی قرار داد اور جس آرڈیننس کے تحت ٹیکس استثنیٰ دیا گیا اس کی نقول بھی طلب کرلیں۔
سینیٹر مصدق ملک کا کہنا تھا کہ ہر چیز میں شفافیت ہونی چاہیے اور حکومت کو کچھ افراد کو ’فوائد‘ پہنچانے کے لیے معاہدے میں ترمیم نہیں کرنی چاہیئے۔
سینیٹر عائشہ نے بھی ان کے تحفظات سے اتفاق کیا اور کہا کہ گوادر فری زون علاقے میں ڈیوٹی استثنٰی کے حوالے سے کمیٹی کو گمراہ کیا گیا۔
اجلاس میں سیکریٹری بحری امور نے کہا کہ ’میں یہ تمام دستاویزات آئندہ روز کمیٹی کے سامنے پیش کرنے کی کوشش کرتا ہوں تاہم سینیٹرز نے سختی سے اس بات پر زور دیا کہ وہ منظوری سے قبل قانون سازوں کو ہر چیز بتانے کے پابند ہیں۔
فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کی ٹیم بھی کمیٹی اراکین کو ٹریڈ فیسیلیٹیشن اگریمنٹ (ٹی ایف اے) کے تحت سرحد پار اشیا کی آمدو رفت کے لیے بجٹ میں پاکستان کسٹم میں اصلاحات پر قائل کرنے میں ناکام ہوگئی۔
ان 2 اصلاحات میں سے ایک آتھرائزڈ اکنامک آپریٹر سے متعلق ہے جسے ستمبر سے پہلے نافذ ہونا ہے، اس پروگرام کا مقصد طریقہ کار کو آسان بنا کر محفوظ تجارتی سپلائی چین کو سہولت فراہم کرنا ہے۔
کمیٹی نے متفقہ طور پر پاکستان کسٹم میں کی گئی ترمیم کو مسترد کردیا، جس میں دوسری ترمیم ایڈوانس رولنگ سے متعلق تھی ان ترامیم کے نفاذ کی حتمی تاریخ 30 ستمبر تھی اس سے پاکستان کسٹم کسی بھی ایسے شخص جو اشیا کی تجارت کرنا چاہ رہا ہو کی درخواست پر ایڈوانس رولنگ دینا کا پابند ہوگا۔
ترمیم کو سینیٹر کی اکثریتی تعداد نے منظور کرلیا تھا لیکن سینیٹر فاروق ایچ نائیک نے ایف بی آر کو حتمی ترمیم کو اپیل کی شق شامل کرنے کی ہدایت کی۔کمیٹی نے ایف بی آر کی اس ترمیم کو مسترد کردیا جس میں کہا گیا تھا کہ ثبوت پیش کرنے کی ذمہ داری ملزم پر ہوگی۔

یہ بھی پڑھیں

نیپرا بجلی کے نرخوں میں ایک روپے 62 پیسے اضافے کی منظوری

نیپرا بجلی کے نرخوں میں ایک روپے 62 پیسے اضافے کی منظوری

اسلام آباد: نیپرا کے ایک ترجمان نے کہا کہ ریگولیٹر کے نئے نرخ وفاقی حکومت …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے