ہسپتال کے شعبہ نیورولوجی اور ڈرماٹولوجی کے ڈاکٹروں کے خلاف کارروائی کی تجویز

لاہور: ہسپتال میں جب کووِڈ 19 کے تشویشناک مریضوں کی تعداد بڑھ کر 110 ہوگئی تھی ٹیچنگ ہسپتال نے نوٹیفکیشن جاری کرتے ہوئے ان افراد کو فرائض انجام دینے کی ہدایت کی تھی

ہسپتال انتظامیہ نے ابتدائی طور پر دونوں شعبوں کے سربراہان پر الزام لگایا کہ انہوں نے ہنگامی حالات میں اپنے ماتحتوں کو بھیجنے سے انکار کردیا تھا۔
شعبہ نیورولوجی کےسربراہ ڈاکٹر احسن نعمان اور ڈرماٹولوجی کے پروفیسر ڈاکٹر طاہر جمیل ہیں۔
ایک سینیئر عہدیدار نےبتایا کہ منگل کو 9واں روز تھا جب ان 35 ڈاکٹروں نے میڈیکل یونٹس (کووِڈ19 وارڈز) میں اپنی ذمہ داریاں انجام نہیں دیں۔
ہسپتال انتظامیہ نے ڈاکٹروں کی جان بوجھ کر غیر حاضری کی انکوائری بھی شروع کردی ہے اور اسے اس پیشے کی اخلاقی اور پیشہ ورانہ ذمہ داریوں کی خلاف ورزی اور ’مجرمانہ غفلت‘ قرار دیا۔
انکوائری کرنے والے افسران کو ان 9 دنوں میں داخل ہونے والے مریضوں کی تفصیلات اکھٹی کرنے کی ہدایت کی گئی ہے تا کہ ان ڈاکٹروں کی غیر حاضری کے دوران کسی مریض کی موت یا بدسلوکی کی صورت میں ان ڈاکٹروں کے خلاف کارروائی کی جائے۔
عہدیدار نے بتایا کہ میو ہسپتال میں تشویشناک مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہونے پر انتظامیہ نے میڈیکل کے تمام خصوصی شعبہ جات اور ای این ٹی ڈپارٹمنٹ کے سربراہان کو مریضوں کی زندگی بچانے کے لیے اپنے ڈاکٹر بھجوانے کی ہدایت کی تھی۔
ان شعبہ جات میں نیفرولوجی، کارڈیالوجی اور نیورولوجی شامل ہیں اور میڈیکل یونٹس کے سینئر فیکلٹی اراکین نے ادارے سے بحران کے اس وقت میں ان شعبوں کے ڈاکٹروں کی خدمات حاصل کرنے کی درخواست کی تھی۔
اسی دوران انتظامیہ نے ان شعبوں کے ڈاکٹروں کے لیے ایک روسٹر(نظام الاوقات) بھی تیار کیا اور شعبہ جات کے سربراہان کو بھجوادیا گیا تا کہ ہائی ڈپینڈینسی یونٹس (ایچ ڈی یوز) اور انتہائی نگہداشت یونٹس(آئی سی یوز) میں ماتحت ڈاکٹر بھجوا کر ہدایات پر عملدرآمد کو یقینی بنایا جاسکے۔
ہسپتال عہدیدار کا کہنا تھا کہ 2 ڈپارٹمنٹس کے علاوہ تمام شعبہ جات کے سربراہان نے ہسپتال انتظامیہ کی درخواست پر عمل کیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں

نرسوں کے سروس سٹرکچرکو اپ گریڈ کرنے کی اصولی منظوری

نرسوں کے سروس سٹرکچرکو اپ گریڈ کرنے کی اصولی منظوری

لاہور: اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے نرسنگ کیڈر …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے