طلاق اور بچہ حوالگی سمیت خاندانی مقدمات کی شرح میں اضافہ

طلاق اور بچہ حوالگی سمیت خاندانی مقدمات کی شرح میں اضافہ

کراچی: ایک رپورٹ کے مطابق کراچی میں سوا سال کے دوارن طلاق، خانگی جھگڑوں میں بہت اضافہ ہوا اور سٹی کورٹ میں 14 ہزار 943مقدمات دائر کیے گئے

دو ہزار سے زائد خواتین نے گزشتہ سال کے دوران اپنے شوہروں سے خلع یا علیحدگی اختیار کی، دو ہزار ایک سو سے زائد بچے والدین کی محبت اور شفقت سے محروم ہوگئے۔
عدالتی ریکارڈ کے مطابق سٹی کورٹ میں سوا سال کے دوران خاندانی نوعیت کے14ہزار943مقدمات درج ہوئے جبکہ گزشتہ سوا سال کے دوران اس قسم کے 4ہزار 752مقدمات نمٹائے گئے۔
رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سٹی کورٹ کے چاروں اضلاع میں2019میں11ہزار143مقدمات داخل ہوئے، رواں سال کے3 ماہ میں اس نوعیت کے 3ہزار800مقدمات داخل ہوئے۔
مغربی تہذیب کے اثرات کے باعث بد قسمتی سے ہمارے معاشرے میں ماضی کے مقابلے میں طلاق کی شرح خطرناک حد تک پہنچ کر ایک سماجی مسئلہ بن چکی ہے جو ہمارے اسلامی معاشرہ میں موجود آئیڈیل خاندانی نظام کو جڑوں سے کھوکھلا کر رہی ہے۔
مایر قانون کے مطابق خلع اور طلاق کی سب سے بڑی وجہ عدم برداشت ہے، فیملی کورٹس ایکٹ اکتوبر 2005 دفعہ (4) سیکشن 10کے تحت طلاق کے عمل کی وجہ سے روزانہ سینکڑوں خواتین ازدواجی زندگی کے بندھن سے آزاد ہورہی ہیں۔
مقدمات کی سماعت کے موقع پر کورٹ میں بچوں سے ملنے کیلئے آنے والے والدین کا کہنا ہے کہ غلطی کسی کی بھی ہو مگر اس کا اثر سب سے زیادہ بچوں کی شخصیات پر پڑتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

لی مارکیٹ میں عوام کیلئے سہولیات سے لیس نئے بیت الخلا قائم

لی مارکیٹ میں عوام کیلئے سہولیات سے لیس نئے بیت الخلا قائم

کراچی: بیت الخلا دو خواتین کے لیے اور دو مردوں کے لیے پاکستان کے پہلے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے