میک ڈونلڈز ریسٹورنٹ کے دو ملازمین کو ریسٹورنٹ میں بیٹھنے سے منع کرنے پر گولی مار دی

میک ڈونلڈز ریسٹورنٹ کے دو ملازمین کو ریسٹورنٹ میں بیٹھنے سے منع کرنے پر گولی مار دی

امریکا : ریسٹورنٹ آئے دو گاہکوں سے عملے نے واپس جانے کا مطالبہ کیا، یہ دونوں ریسٹورنٹ کے ڈائننگ ایریا میں بیٹھنے پر زور دے رہے تھے تاہم عملے نے کورونا وائرس کے باعث ان سے جانے کو کہا

جس کے بعد ان دو افراد نے ملازمین پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں 2 ملازم گولی لگنے سے زخمی ہوئے جبکہ ایک اور ملازم بھی اس دوران زخمی ہوا۔
ریسٹورنٹ عملے نے کورونا وائرس کے باعث لگی پابندیوں کی وجہ سے ان گاہکوں سے جانے کا مطالبہ کیا تھا، جس کے بعد ان کو غصہ آگیا اور انہوں نے فائرنگ شروع کردی۔
پولیس کے مطابق دو ملازمین میں ایک کو کندھے پر جبکہ دوسرے کو ٹانگ پر گولی لگی جس کے فوری بعد انہیں ہسپتال منتقل کردیا گیا۔
پولیس نے یہ بھی بتایا کہ اس دوران ایک خاتون ملازم کے سر پر چوٹ آئی۔
رپورٹ میں مزید بتایا گیا کہ دونوں ملزمان موقع سے فرار ہوگئے جنہیں قریبی علاقے سے گرفتار کرلیا گیا۔
کورونا وائرس کے باعث لگی پابندی کے بعد عوام کی جانب سے سخت ردعمل دیکھنے میں آرہا ہے۔
چند روز قبل مشی گن میں اسٹور کے گارڈ کو اس وقت گولی مار دی گئی جب اس نے ایک گاہک کو فیس ماسک پہننے کو کہا۔
امریکا کی تمام 50 ہی ریاستوں میں کورونا وائرس کی وبا کے باعث مارچ کے آغاز سے جزوی لاک ڈاؤن نافذ ہے تاہم وہاں کئی ریاستوں میں اب لوگ لاک ڈاؤن کو ختم کرنے کے لیے مظاہرے بھی کر رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

طلوع آفتاب سے قبل تین منزلہ رہائشی عمارت گرنے سے کم از کم 10 افراد ہلاک

طلوع آفتاب سے قبل تین منزلہ رہائشی عمارت گرنے سے کم از کم 10 افراد ہلاک

بھارت: بھونڈی کی نگرانی کرنے والے تھانہ سٹی اتھارٹی کے ایک عہدیدار نے اے ایف …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے