ٹیکسٹائل انڈسٹریز کا لاک ڈاؤن کے دوران ملازمین کو تنخواہ دینے سے انکار

کراچی : انڈسٹریز بند ہیں ملازمین کو تنخواہ نہیں دے سکتے، ٹیکسٹائل انڈسٹریز کی سندھ ہائی کورٹ میں درخواست

سندھ ہائیکورٹ میں لاک ڈاؤن کے دوران سندھ حکومت کے فیصلوں کے خلاف معروف ٹیکسٹائل انڈسٹریز کی درخواست کی سماعت ہوئی۔

سندھ ہائی کورٹ میں سماعت کے دوران کراچی کی ٹیکسٹائل انڈسٹریز نے لاک ڈاؤن کے دوران ملازمین کو تنخواہ دینے سے انکار کردیا ہے۔

فیکٹری مالکان کے وکیل نے کہا کہ بہت اہم مسئلہ ہے ہم چاہتے ہیں کیس فوری طور پر سنا جائے۔

درخواست گزار ٹیکسٹائل مالکان کے وکیل کا مؤقف ہے کہ لاک ڈاؤن کے دوران ملازمین کو برطرف نہ کرنے اور ماہوار تنخواہ بھی جاری کرنے کا پابند کیا گیا ہے۔ لاک ڈاؤن کی وجہ سے ٹیکسٹائل انڈسٹریز کی امپورٹ اور ایکسپورٹ مکمل طور ہر بند ہے، انڈسٹریز بند ہیں ملازمین کو تنخواہ نہیں دے سکتے۔ سندھ حکومت کا ملازمین کو تنخواہ جاری کرنے کا حکم سندھ پیمنٹ ایکٹ کی خلاف ورزی ہے۔

محکمہ داخلہ سندھ اور سندھ لیبر ڈیپارٹمنٹ نے عدالت میں تحریری جواب جمع کرادیا۔

جواب کے مطابق سندھ حکومت نے ورکروں کو گھر پر رہنے کے لئے اقدامات کئے ہیں۔ سندھ پیمنٹ ویجز ایکٹ 2015 کے تحت فیکٹری مالکان ورکروں کو تنخواہ ادا کرنے کے پابند ہیں ۔تمام فیکٹری مالکان ملازمین کو کورونا وائرس سے بچانے کے لئے ہر ممکنہ اقدامات کریں۔

عدالت نے 6 مئی تک فریقین سے دلائل طلب کرلیے ہیں۔

 

یہ بھی پڑھیں

ایس او پیز پر عمل اور احتیاط کریں ، آپ محفوظ رہیں گے

اسلام آباد: وزیراعظم نے کہا ہے کہ کورونا جانے والا نہیں، ویکسین کی تیاری تک …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے