سی بی اے کے سوا ملازمین کی تمام تنظیموں کو 6 ماہ کے لیے نا منظور کردیا گیا

سی بی اے کے سوا ملازمین کی تمام تنظیموں کو 6 ماہ کے لیے نا منظور کردیا گیا

راولپنڈی: یہ اقدام پی آئی اے کی جانب سے دنیا کے مختلف ممالک میں پھنسے پاکستانیوں کے بچاؤ، نکالنے اور وطن واپس لانے کے لیے اٹھایا گیا

پی آئی اے انتظامیہ کے جاری کردہ نوٹیفکیشن کے مطابق سی بی اے کے سوا ملازمین کی تمام تنظیموں کو 6 ماہ کے لیے نا منظور کردیا گیا۔
جن تنظیموں کو نا منظور کیا گیا اسن میں پاکستان ایئرلائن پائلٹس ایسوسی ایشن (پالپا)، سینئر اسٹاف ایسوسی ایشن، ایئرلائن ٹیکنالوجسٹس ایسوس ایشن آف پاکستان، سوسائٹی آف ایئر کرافٹ انجینئرز آف پاکستان اور پاکستان ایئر لائنن کیبن کریو ایسوسی ایشن شامل ہے۔
یہ تنظیمیں صرف پی آئی اے ملازمین کی نمائندگی کرتی ہیں دیگر ایئرلائنز کے ورکرز کی نہیں۔
پی آئی اے انتظامیہ نے یہ اقدام لازمی آپریشن اور کمپنی کو ان متعدد گروپس کے چنگل سے نکالنے کے لیے اٹھایا جو متوازی انتظامیہ بنانے کی کوشش کررہے ہیں۔
نوٹیفکیشن کے مطابق یہ اس ضمانت کے ساتھ ہے کہ یہ اقدامات ملازمین کے خلاف نہیں بلکہ اس کا مقصد صرف کمپنی کے افعال کا تسلسل برقرار رکھنا ہے۔
اس سلسلے میں مذکورہ بالا تمام تنظیموں کے سربراہان کو علیحدہ علیحدہ خطوط ارسال کیے گئے۔
چنانچہ اب سے انتظامیہ اور ملازمین کے درمیان مذاکرات کروانے کے لیے صرف ایک منظورہ شدہ تنظیم ہوگی جو سی بی اے ہے اور اسے انڈسٹریل ریلیشن ایکٹ 2012 کی دفعہ 19 کے تحت قانونی حیثیت حاصل ہے۔
اس طرح ان ایسوسی ایشنز کے پیش کردہ تمام معاملات پر اب کارروائی نہیں ہوگی البتہ انفرادی درخواستوں پر فیصلہ میرٹ کو دیکھتے ہوئے کیا جائے گا۔
اس کے علاوہ معاہدوں کے ختم ہونے کے نتیجے میں منتظمیں کے احکامات الگ سے جاری کردیے گئے۔
ورکرز ایسوسی ایشن کے سربراہان کو لکھے گئے خط میں بھی یہ کہا گیا کہ اس کا مقصد تنخواہوں، مراعات، الاؤنسسز اور ملازمین کے دیگر فوائد کو کم کرنا نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں

جب تک سیاستدان جمہوریت نہیں لاتے جمہوریت کیسےآسکتی ہے

جب تک سیاستدان جمہوریت نہیں لاتے جمہوریت کیسےآسکتی ہے

اسلام آباد: وفاقی وزیربرائے سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری کا کہنا ہے کہ پاکستان میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے