جناح اسپتال میں کورونا وائرس مریضوں کے لیے قائم کردہ 23 نمبر وارڈ کی حالت انتہائی غیر معیاری

جناح اسپتال میں کورونا وائرس مریضوں کے لیے قائم کردہ 23 نمبر وارڈ کی حالت انتہائی غیر معیاری

کراچی: کورونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کے لیے قائم کیے جانے والے 23 نمبر وارڈ میں لائے گئے مریضوں میں سے اب تک 12 مریض انتقال کرگئے ہیں جب کہ دیگر مریضوں کا کوئی پرسان حال نہیں

ایک مریض جناح اسپتال میں کورونا مریضوں کے لیے مختص وارڈ نمبر 23 کی ویڈیو بنا رہا ہے جس میں مریض کا یہ کہناہے کہ وارڈ میں 2 میتیں بھی اسٹریچر پر پڑی دیکھی جاسکتی ہیں۔
شہریوں کا شکوہ ہے کہ وارڈ کی حالت کا کوئی پرسان حال نہیں، نہ ہی کوئی ڈاکٹر پوچھنے آتا ہے اور نہ ہی کوئی طبی عملہ طبی دیکھ بھال کے لیے آرہا ہے۔
سوشل میڈیا پر جناح اسپتال کے کورونا وائرس سے متاثرہ مریضوں کے لیے مختص وارڈ کی ویڈیو میں دیگر مریضوں نے بھی حکومت سے اپیل کی ہے کہ خداراہ انہیں اس 23 نمبر وارڈ سے نکالاجائے۔
وارڈ 23 میں داخل مریضوں کا مزید کہنا ہے کہ کوئی علاج کی سہولیات موجود نہیں ہے اور مریضوں میں بھی خوف طاری ہے، اور دادرسی بھی نہیں کی جارہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

شرجیل میمن کی اہلیہ صدف کا نام ای سی ایل سے خارج

شرجیل میمن کی اہلیہ صدف کا نام ای سی ایل سے خارج

کراچی: درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا تھا کہ وہ دبئی میں کاروبار کرتی ہیں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے