کالعدم لشکر جھنگوی کے دہشتگرد کا پروفیسر سبط جعفر کے قتل کا اعتراف

کراچی: کالعدم لشکر جھنگوی کے گرفتار دہشت گرد شہاب نے پروفیسر سبط جعفر کے قتل کا اعتراف کرتے ہوئے سنسنی خیز انکشافات کئے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق کالعدم تنظیم کے گرفتار دہشت گرد شہاب عرف چھوٹا نے سنسنی خیز انکشافات کرتے ہوئے اپنے جرائم کا اعتراف کرلیا ہے۔ تفتیشی ذرائع کے مطابق ملزم نے جون 2013ء میں لشکر جھنگوی کے خطرناک دہشت گرد نعیم بخاری کے اشارے پر ایم کیو ایم کے رکن صوبائی اسمبلی ساجد قریشی اور ان کے بیٹے کو موت کے گھاٹ اتارا۔ سنہ 2013ء میں ہی لیاقت آباد تھانے کی حدود میں پروفیسر سبط جعفر کے قتل کا بھی اعتراف کیا۔ پروفیسر سبط جعفر لیاقت آباد گورنمنٹ کالج میں پروفیسر تھے۔ ملزم نے سنہ 2012ء میں رضویہ کے علاقے میں ساجد کاظمی اور گلبرگ میں ساتھیوں کے ساتھ مل کر دو سگے بھائیوں سمیت پانچ افراد کے قتل میں مرکزی کردار ادا کیا۔ شہاب چھوٹا نے گلبہار میں پولیس اہلکار مختار کے قتل کا اعتراف بھی کرلیا۔ سنسنی خیز انکشافات کے بعد سکیورٹی اداروں نے ملزم کی جے آئی ٹی کو انتہائی خطرناک اور سیاہ قرار دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

خورشید شاہ کو سخت سیکیورٹی میں سکھر کی احتساب عدالت میں پیش

خورشید شاہ کو سخت سیکیورٹی میں سکھر کی احتساب عدالت میں پیش

سکھر: سماعت شروع ہوئی نیب کی جانب سے خورشید شاہ کے15 روزہ جسمانی ریمانڈ کی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے