ڈیٹا پروٹیکشن بل کا مسودہ مشاورت کے لیے جاری کردیا

ڈیٹا پروٹیکشن بل کا مسودہ مشاورت کے لیے جاری کردیا

کراچی: بل وزارت آئی ٹی کی سرکاری ویب سائٹ پر دستیاب ہے اور تفصیلات کے مطابق اسٹیک ہولڈر 15 مئی تک ای میل ایڈریس info@moitt.gov.pk پر اپنی تجاوزیز ارسال کرسکتے ہیں

ہم عملدرآمد کے لیے مدت کے تعین کا فیصلہ کریں گے لیکن یہ ہمیں موصول ہونے والے فیڈ بیک پر منحصر ہے‘۔
یہ پاکستان کا پہلا ڈیٹا پروٹیکشن مسودہ نہیں ہے بلکہ اس سے قبل جولائی 2018 میں بھی وزارت آئی ٹی نے پرسنل ڈیٹا پروٹیکشن بل 2018 کا مسودہ تیار کیا تھا جس میں ذاتی ڈیٹا کو غیر قانونی طور پر استعمال کرنے پر 50 لاکھ جرمانہ اور 2 سال قید کی سزا تجویز کی گئی تھی۔
نئے مسودے کے مطابق اس قانون سازی کا مقصد ذاتی ڈیٹا کے اظہار، اکٹھا کرنا اور اس کی پروسیسنگ کی نگرانی کرنا اور لوگوں کے ڈیٹا تحفظ کے حق کی خلاف ورزی کے جرائم سے متعلق دفعات بنانا ہے۔
قبل ازیں ڈیجیٹل اور انسانی حقوق کی تنظیموں نے ایک مشترکہ بیان میں کووِڈ 19 کے دوران ڈیٹا کے تحفظ کے حوالے سے کسی قانون کی غیر موجودگی میں حکومت کی جانب سے ڈیجیٹل نگرانی کے اقدامات میں اضافے پر تشویش کا اظہار کیا تھا۔
تنظیموں نے حکومت پر زور دیا تھا کہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ ایسے وقت میں ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کا استعمال بغیر نگرانی کے نہ رہے۔
حکومت سے یہ درخواست بھی کی گئی تھی کہ عوام کے ڈیٹا کو اکٹھا کرنے اسے محفوظ کرنے اور اس کی پروسیسنگ کرنے کے دوران شفافیت کو ملحوظ خاطر رکھا جائے۔
جیسا کہ حکومت کی جانب سے وائرس کے پھیلاؤ کی نشاندہی کے لیے موبائل فون ٹریکنگ جیسے ڈیجیٹل اقدامات اٹھائے جارہے ہیں اس تناظر میں حقوق کی تنظیموں کا کہنا تھا کہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ ڈیٹا اکٹھا کرنے کا مقصد صرف وائرس کا پھیلاؤ روکنا ہو۔

یہ بھی پڑھیں

کے الیکٹرک نے نیپرا کی عوامی سماعت کے بعد شہریوں کو مزید تنگ کرنا شروع کردیا

کے الیکٹرک نے نیپرا کی عوامی سماعت کے بعد شہریوں کو مزید تنگ کرنا شروع کردیا

کراچی: کے الیکٹرک نے شدید گرمی کے موسم میں بھی شہرکے متعدد علاقوں میں 3 …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے