شہباز شریف کی احتساب عدالت میں مستقل حاضری معافی کے فیصلے کو لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج

شہباز شریف کی احتساب عدالت میں مستقل حاضری معافی کے فیصلے کو لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج

لاہور: نیب نے لاہور ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی، جس میں موقف اختیار کیا گیا کہ شہباز شریف کے خلاف احتساب عدالت میں آشیانہ اقبال ریفرنس اور رمضان شوگر مل ریفرنس زیر سماعت ہیں اور ان پر ٹرائل ہو رہا ہے

ٹرائل کورٹ نے شہباز شریف کو مرکزی ملزم ہونے کے باوجود مستقل حاظری معافی کی درخواست منظور کی اور استدعا کی کہ ٹرائل کورٹ کا شہباز شریف کو مستقل حاظری معافی دینے کا فیصلہ کالعدم قرار دیا جائے اور شہباز شریف کو ٹرائل میں شل ہونے کا حکم دیا جائے۔
احتساب عدالت میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف خاندان کے اثاثےمنجمدکرنے سےمتعلق کیس کی سماعت ہوئی ، نیب نے شہباز شریف خاندان کے اعتراضات پر جواب جمع کرادیا۔
جواب میں کہا گیا شہباز شریف،حمزہ ودیگر کیخلاف منی لانڈرنگ الزامات پرتفتیش جاری ہے، انھوں نے اپنی بیویوں کے نام پر جائیدادیں بنا رکھی ہیں،جواب
شہباز شریف کی فیملی جائیدادوں کے ذرائع بتانے میں ناکام رہی۔
نیب کا کہنا تھا کہ منی لانڈرنگ ایکٹ،فنانس ایکٹ کے مطابق جائیدادوں کےذرائع بتانالازم ہے، شہباز شریف خاندان سے جائیدادوں کے متعلق بار بار جواب مانگا گیا، شہباز شریف سمیت انکی فیملی جواب دینے میں ناکام رہی۔
جواب میں کہا گیا شہباز فیملی کے اثاثہ جات قانون کے مطابق منجمد کئےگئےہیں، ،وکیل شہباز شریف کا کہنا تھا کہ انویسٹی گیشن کے دوران اثاثے منجمد نہیں کئےجاسکتے، عدالت اثاثے منجمد کرنے کے حکم پر نظر ثانی کرے۔

یہ بھی پڑھیں

ماڈل عظمیٰ خان پر تشدد کا مقدمہ درج

لاہور : اداکارہ عظمیٰ خان اور ان کی بہن ہما خان کو تشدد کا نشانہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے