شریف خاندان کی زیر ملکیت شوگر ملز پر چھاپہ

شریف خاندان کی زیر ملکیت شوگر ملز پر چھاپہ

بہاولپور: احمد پور کے اسسٹنٹ کمشنر کی سربراہی میں محکمہ صنعت کے ضلعی افسران، پولیس کی اسپیشل برانچ اور دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں پر مشتمل ٹیم نے ملز کے گودام پر چھاپہ مار کر چینی قبضے میں لے لی

لاکھوں روپے مالیت کی چینی کی بوریاں قبضے میں لینے کے بعد گودام کو مہر بند (سیلڈ) کردیا گیا۔
چنی گوٹھ میں شریف خاندان کی زیر ملکیت ملز میں حالیہ کرشنگ سیزن کے دوران کام نہیں ہوا کیوں وہ قانونی چارہ جوئی کے باعث بند پڑی تھیں۔
سرکاری محکمے کی جانب سے ذخیرہ کردہ چینی کی برآمدگی کے حوالے سے باضابطہ طور پر کوئی پریس ریلیز جاری نہیں کی گئی۔
دوسری جانب ضلعی پولیس افسر کے ترجمان جام ساجد نے اس بات کی تصدیق کی کہ ملز پر چھاپہ مارا گیا تھا، انہوں نے بتایا کہ چھاپے کے بعد گودام کو سیلڈ کردیا گیا۔
انہوں نے دعویٰ کیا کہ مقامی پولیس کو ملز انتظامیہ کے خلاف کی گئی کسی بھی کارروائی کی اطلاع نہیں دی گئی اور ضلعی انتظامیہ اس معاملے کی نگرانی کررہی ہے۔
اتفاق شوگر ملز کے منیجر کے حوالے سے بتایا کہ مذکورہ اسٹاک 2 سیزن سے زائد پرانا ہے جسے قانونی چارہ جوئی کے باعث استعمال نہیں کیا جاسکا، انہوں نے ذخیرہ اندوزی کے معاملے کو مسترد کردیا۔
ستمبر 2017 میں لاہور ہائی کورٹ نے شریف خاندان کے اراکین کی زیر ملکیت اتفاق شوگر ملز (چنی گوٹھ)، حسیب وقاص شوگر ملز (مظفرگڑھ) اور چوہدری شوگر ملز (رحیم یار خان) کو 3 ماہ کی مدت میں ان کے سابقہ مقام پر منتقل کرنے کا حکم دیا تھا۔
لاہور ہائی کورٹ نے یہ فیصلہ پاکستان تحریک انصاف اور جے ڈبلیو شوگر ملز کے مالک جہانگیر ترین کی دائر کردہ درخواست پر سنایا تھا جس میں انہوں نے موقف اختیار کیا تھا کہ شوگر ملز کی منتقلی پر پابندی عائد ہونے کے باجود ان ملز کو نئے مقام پر منتقل کیا گیا۔
مارچ 2017 میں لاہور ہائی کورٹ نے شریف خاندان کی زیر ملکیت 3 میں سے 2 ملز کو مہر بند (سیل) کرنے کا حکم دیا تھا۔
ستمبر 2018 میں سپریم کورٹ نے لاہور ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف شریف خاندان کی جانب سے دائر درخواستیں مسترد کردیں تھیں اور تینوں شوگر ملز کو جنوبی پنجاب سے واپس وسطی پنجاب میں ان کے گزشتہ مقام پر منتقل کرنے کا حکم دیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں

پنجاب اسمبلی میں منظور ہونے والے پنجاب تحفظِ بنیادِ اسلام بل 2020 پر تنقید کی گئی

پنجاب اسمبلی میں منظور ہونے والے پنجاب تحفظِ بنیادِ اسلام بل 2020 پر تنقید کی گئی

اسلام آباد: وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے ایک ٹوئٹ میں لکھا کہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے