عراق میں امریکی فوجی اڈوں پر حملہ تو محض ایک ’وارننگ‘ تھی، ایران

عراق میں امریکی فوجی اڈوں پر حملہ تو محض ایک ’وارننگ‘ تھی، ایران

تہران: 

ایرانی وزیر دفاع نے کہا ہے کہ عراق کی سرزمین پر امریکی فوجی کیمپ پر میزائل حملہ تو محض ایک ’وارننگ‘ تھی لہذا ٹرمپ انتظامیہ ہمارے صبر کا امتحان نہ لے۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق ایران کے وزیر دفاع عامر حاتمی نے کہا ہے کہ امریکا نے اب عراق میں فوجی بیس پر میزائل حملے میں اپنے 11 اہلکاروں کے زخمی ہونے کا اعتراف کرلیا ہے، یہ حملہ ایران کی جانب سے امریکا کو محض ایک وارننگ تھی۔

ایرانی وزیر دفاع نے امریکا کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ایران کے صبر کا امتحان نہ لے ورنہ زیادہ بڑا ردعمل بھی سامنے آسکتا ہے۔ ہم ایک طمانچہ رسید کرچکے ہیں اور اپنے بہادر جنرل کی شہادت کا بدلہ ضرور لیں گے۔

واضح رہے کہ ایک ہفتے قبل ایرانی فوج نے اپنے جنرل قاسم سلیمانی کی امریکی حملے میں ہلاکت کے بعد عراق میں واقع دو امریکی اڈوں پر میزائل حملہ کیا تھا جس پر امریکا نے پہلے تو کسی قسم کے نقصان سے انکار کیا تھا تاہم بعد میں اپنے 11 اہلکاروں کے زخمی ہونے کی تصدیق کی تھی۔

 

مسخرہ اور شیطانی حکومت کہنے پر ٹرمپ ایران کے سپریم لیڈر پر برہم

یہ بھی پڑھیں

ہمسایہ ممالک کے ساتھ سرحدوں کی بندش عارضی ہے: ایرانی وزارت خارجہ

ہمسایہ ممالک کے ساتھ سرحدوں کی بندش عارضی ہے: ایرانی وزارت خارجہ

ایران کی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ ہمسایہ ممالک کے ساتھ ایران …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے