2019ء میں پولیس کی مددکے بغیرلاکھوں روپے کی ریکوری اورملزمان پکڑے گئے

2019ء میں پولیس کی مددکے بغیرلاکھوں روپے کی ریکوری اورملزمان پکڑے گئے

پشاور: ایف آئی اے نے گزشتہ سال 6 بڑے چھاپوں میں 9.07 ملین غیر قانونی ٹرانزکشن پکڑنے، 85.46 ملین برآمد کرنے، 28ملین مالیتی 3.8 کلو سوناضبط کرنے جیسی کارروائیوں میں داد و تحسین وصول کرنے کے بعددعویٰ کیا

ایف آئی اے کے حوالے سے دعویٰ کیاکہ ماضی میں یہ چھاپے اس لئے ناکام رہے کیونکہ کچھ پولیس افسرکارروائی سے قبل معلومات لیک کردیتے تھے جس سے جرائم پیشہ افرادکوفرارہونے میں مددملتی۔
فنانشل ایکشن ٹاسک فورس(FATF)کی طرف سے دباؤبڑھائے جانے کے بعدایف آئی اے نے اپنی پالیسی تبدیل کردی اوریہ فیصلہ کیاکہ مقامی پولیس کوبڑی کارروائیوں کے بارے میں اندھیرے میں رکھاجائے۔جس کے نتیجے میںایف آئی اے نے منی لانڈررزدہشت گردکارروائیوں کیلئے فنڈنگ میں ملوث تنظیموں کے خلاف بڑی کارروائیوں کاآغاز کردیاہے۔
2019میں بڑے اہداف کے خلاف کی گئی کارروائیوں سے متعلق ایف آئی اے افسران نے بتایاکہ ماضی میںچھاپوں کے دوران مقامی پولیس ایف آئی اے اہلکاروں کے ہمراہ ہوتی تھی جوجرائم پیشہ افرادکی مددکیلئے معلومات افشاکردیتی تھی ۔

یہ بھی پڑھیں

کلاچی کے علاقے میں پولیس موبائل کے قریب دھماکا

کلاچی کے علاقے میں پولیس موبائل کے قریب دھماکا

ڈیرہ اسمٰعیل: شہر ڈیرہ اسمٰعیل خان میں پولیس وین کے قریب امپرووائسڈ ایکسپلوزو ڈیوائس (آئی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے