دنیا میں تیسری جنگ کا خطرہ ہے

سوویت یونین کے سابق صدرگورچوف نے کہا کہ تیسری جنگ کا خطرہ ہے، عالمی طاقتوں کے تعلقات بدترہورہے ہیں، سیاسی مذاکرات سے مشترکہ فیصلے کرنا ہوں گے۔

سابق صدر نے کہا کہ دنیا کو جنگ کے خوف سے نکالنا سب سے اہم ہے، خطرناک ہتھیاروں کی خریداری آسان ہوگئی ہے، آج کے دور میں ایک آبدوز کے حملے میں آدھے براعظم کو تباہ کیا جاسکتا ہے۔

گوربا چیف کا کہنا تھا کہ یورپ میں مزید فوج، ٹینک اور جدید ہتھیار آرہے ہیں، عسکری صلاحیتوں میں اضافے کے خواہش مند تیار بیٹھے ہیں اور یہ صورتحال انتہائی خطرناک ہے۔ نیٹو اور روسی افواج آنکھوں میں آنکھیں ڈالے کھڑی ہیں۔

میخائل گورباچوف نے کہا کہ جنگ کے امکان سے بچنے کے لئے سیاسی ڈائیلاگ کے ذریعے مشترکہ فیصلے کرنا ہونگے،ایٹمی ہتھیاروں میں کمی، میزائل ڈیفنس اوراسٹریٹیجک صلاحیتوں میں کمی لانا ہوگی۔

سابق صدر نے امریکی اور روسی صدور کو مخطب کرتے ہوئے کہا کہ امریکی صدرڈونلڈٹرمپ اورروسی صدرپیوٹن مل کرعالمی جنگ روکیں۔

انھوں نے اپیل کی کہ سلامتی کونسل کی ذمہ داری ہے کہ سربراہ اجلاس بلا کر ایٹمی ہتھیاروں کے استعمال کے خطرے کو روکا جائے۔

یہ بھی پڑھیں

ٹرمپ کا دماغی توازن بگڑتا جارہا ہے، امریکی ماہرین نفسیات

ٹرمپ کا دماغی توازن بگڑتا جارہا ہے، امریکی ماہرین نفسیات

امریکا میں تین سو پچاس ماہرین نفسیات اور ڈاکٹروں نے امریکی کانگریس کو صدر ٹرمپ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے