نوازشریف کی نام نہاد جمہوریت اورآمریت میں کوئی فرق نہیں، عمران خان

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کہتے ہیں کہ نوازشریف آمر بننا چاہتے ہیں اس لیے ان کی نام نہاد جمہوریت اورآمریت میں کوئی فرق نہیں۔

سپریم کورٹ کے باہرمیڈیا سے بات کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ پاناما کا معاملہ منظر عام پر آنے کے بعد صرف ہم نے نہیں تمام اپوزیشن جماعتوں نے وزیراعظم سے جواب مانگا تھا لیکن انہوں نے پارلیمنٹ کوجواب نہیں دیا تو ہم نے عدالت آنے کا فیصلہ کیا،خواجہ آصف نے اسمبلی میں کہا میاں صاحب فکر نہ کریں، لوگ بھول جائیں گے۔ مسلم لیگ کے وزیر کہتے ہیں 1999 میں پرویز مشرف برسراقتدار آئے تو عمران خان نے خوشیاں منائی تھیں اور وہ اس کا اعتراف بھی کرتے ہیں کیونکہ اس وقت نواز شریف امیر الممومنین بننے کے لیے آئینی ترامیم لارہے تھے، ہم اپوزیشن جماعتوں کے ساتھ نوازحکومت کے خلاف تحریک چلا رہے تھے۔ آج بھی ان کا ماننا ہے کہ نواز شریف کی نام نہاد جمہوریت اورآمریت میں کوئی فرق نہیں، وہ اب بھی آمر بننا چاہتے ہیں، نواز شریف جو کچھ کررہے ہیں ایسا آمریت میں ہی ہوتا ہے، وہ اداروں کو تباہ کر رہے ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ مریم نوازشریف کا اپنے انٹرویو میں کہنا تھا کہ ان کی اندرون ملک یا بیرون ملک کوئی جائیداد نہیں لیکن پاناما کیس میں نوازشریف کی اربوں کی پراپرٹی کا انکشاف ہواہے، تمام اپوزیشن جماعتوں نے حکومت سے جواب مانگا، نواز شریف کے 7 نومبر سے پہلے کے بیان میں قطری خط نہیں تھا، قطری خط لاکر پورے پاکستان میں اپنا مذاق اڑایا گیا۔ شکارکی اجازت پر قطری شہزادے کا خط آیا، ایف بی آر میں دو لوگ دستاویزات تبدیل کررہے ہیں۔ اب قطری شہزادے کا ایک اور خط آگیا۔

یہ بھی پڑھیں

عالمی بینک نے کووڈ-19 سےنمٹنے کیلئے 50 کروڑ ڈالر قرض کی منظوری

عالمی بینک نے کووڈ-19 سےنمٹنے کیلئے 50 کروڑ ڈالر قرض کی منظوری

اسلام آباد: عالمی بینک کی جانب سے یہ قرض فوری جاری کردیا جائے گا اور …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے