شدید غذائی قلت جین کو تبدیل کرکے کئی بیماریوں کی وجہ بن سکتی ہے

شدید غذائی قلت جین کو تبدیل کرکے کئی بیماریوں کی وجہ بن سکتی ہے

ہیوسٹن: بیلرکالج آف میڈیسن نے ایک تحقیق کے بعد کہا ہے کہ بالخصوص اگربچوں میں غذائی قلت بہت شدید ہو تو اس سے ایپی جنیٹک سطح پر ڈی این اے متاثر ہوتا ہے یعنی جین کے احکامات (ایکسپریشنز)بدل جاتے ہیں

اس قسم کی غذائی قلت کو طبی طور پر دو اقسام یعنی ای ایس اے ایم اور این ای ایس اے ایم میں بانٹا جاتا ہے۔
یہ دونوں کیفیات بچوں کی زندگی کے اولین دنوں میں ظہور ہوسکتی ہیں جن کا پورا نام ’ ایڈامیشس سیویئر اکیوٹ میل نیوٹریشن (ای ایس اے ایم) اور ’ نان ایڈامیشس سیویئر اکیوٹ میل نیوٹریشن ‘ (این ای ایس اے ایم) ہیں، اس کی تحقیقات نیچر میں شائع ہوئی ہیں۔
ان میں سے ای ایس اے ایم ، بچے کے جین پر پیچیدہ ترین اثرات مرتب کرتی ہے۔ اس سے میٹا بولزم اور غذائیت کے دیگر مسائل جنم لیتے ہیں۔ مثال کے طور یہ ای ایس اے ایم جگر پر چربی کے امراض، جسمانی کمزوری اور خون میں شکر کی غیرمعمولی مقدار کو بڑھاوا دیتے ہیں۔ بیلر کالج کے پروفیسر نیل ہینچرڈ کے مطابق ای ایس اے ایم جسمانی سوجن، کئی اعضا کی تباہی، جگر کی خرابی ، خون کے خلیات اور آنتوں کو متاثر کرنے کی وجہ بنتی ہے۔ ان کی وجہ سے بچوں کا وزن کم ہوتا ہے اور ان کی جلد اور بال بھی متاثر ہوتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

دنیا بھر میں کرونا وائرس انفکیشن سے اموات کی تعداد 11 لاکھ 23 ہزار سے تجاوز کر گئی

دنیا بھر میں کرونا وائرس انفکیشن سے اموات کی تعداد 11 لاکھ 23 ہزار سے تجاوز کر گئی

شنگھائی: نجی سافٹ ویئر سلوشن کمپنی کی ریفرنس ویب سائٹ ورلڈومیٹر کے اعداد و شمار …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے