آغا سراج درانی کے خلاف آمدن سے زائد اثاثہ جات ریفرنس میں ضمانت منظور

آغا سراج درانی کے خلاف آمدن سے زائد اثاثہ جات ریفرنس میں ضمانت منظور

کراچی: دوران سماعت بینچ نے آغا سراج درانی کی گرفتاری پر قومی احتساب بیورو (نیب) کے اقدام پر سوال اٹھایا

عدالت نے آغا سراج درانی کی گرفتاری اور ان کے گھر کی تلاشی کو بلاجواز قرار دیا۔
اس ضمن میں دو رکنی بینچ نے امید ظاہر کی کہ چیئرمین نیب افسران کی تربیت، نظم و ضبط اور پیشہ ورانہ مہارت کو مزید بڑھانے، تلاشی اور گرفتاری کے طریق کار میں بہتری لانے سے متعلق ہدایت جاری کریں۔
بینچ نے ریمارکس دیے کہ درخواست گزار ضمانت کی رعایت کے مستحق ہیں کیونکہ مذکورہ معاملے میں بہت سے پہلو توجہ طلب ہیں اور اس میں مزید انکوائری کی جانی چاہیے۔
عدالتی حکم نامے میں ریمارکس دیے گئے کہ قانون نافذ کرنے والے ادارے کی جانب سے کسی شخص کے گھر کی تلاشی کرنے کے لیے قانون میں طریقہ کار موجود ہے، انتہائی افسوسناک بات یہ ہے کہ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ آغا سراج درانی کے گھر کی تلاشی سیکشن 103 سی آر پی سی میں طے شدہ طریقہ کار کی خلاف ورزی ہے جس میں غیر پیشہ ورانہ انداز نمایاں ہے۔
حکم نامے میں مزید کہا گیا کہ تفتیشی افسر نے اعتراف کیا کہ وہ فوجداری ضابطہ اخلاق کی دفعہ 103 کے بارے میں نہیں جانتے۔
جولائی 2018 میں نیب نے اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کے خلاف کرپشن کے مختلف الزامات پر انکوائری کی منظوری دی تھی۔

یہ بھی پڑھیں

سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی میں 100 ارب کی کرپشن بے نقاب ہوگئی

سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی میں 100 ارب کی کرپشن بے نقاب ہوگئی

کراچی: سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی میں 100 ارب کی کرپشن بے نقاب ہوگئی، سندھ لوکل …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے