ایف اے ٹی ایف کے اہداف عمل درآمد جاری ہے

ایف اے ٹی ایف کے اہداف عمل درآمد جاری ہے

اسلام آباد: قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کے اجلاس کی صدارت ہوئے کہی، اس موقع پر وفاقی وزیر برائے اقتصادی امور حماد اظہر ، چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی اور دیگر افسران بھی موجود تھے

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس میں پاکستان ابھی گرے لسٹ میں ہے پھر بلیک لسٹ کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے جبکہ ہمسایہ ملک افغانستان بلیک لسٹ میں شامل نہیں ہے۔
اسد عمر نے کہا کہ ایف اے ٹی ایف تفصیلات چاہتا ہے کہ پاکستان نے کتنے لوگوں کو گرفتار کیا اور اب تک کتنے لوگوں کو مجرم قرار دیا گیا۔ اس حوالے سے قانون نافذ کرنے والے اداروں اور ریگولیٹرز کے درمیان تعاون بہتر ہوا ہے۔ قانون سازی بہتر ہوئی تو مزید مطالبات سامنے آ گئے۔
شبر زیدی نے کہا کہ بیرون ملک پیسہ غیر قانونی طریقے سے نہیں بھیجا گیا۔ گزشتہ سال سے قبل کوئی بھی شخص ڈالر خرید کر باہر بھیج سکتا تھا۔انہوں نے اجلاس کو بتایا کہ شناختی کارڈ کی شرط سے دستبردار نہیں ہوئے، صرف عمل درآمد روکا گیا ہے۔
پاکستان 27 اہداف میں سے صرف پانچ میں کمزور ہے اور یہ اہداف منی لانڈرنگ کے قانون پر عمل درآمد، کرنسی کے اسمگلرز اور کالعدم تنظیموں کے اثاثوں کے خلاف کارروائی سے متعلق ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

ملکی معیشت اس وقت مستحکم ہے

ملکی معیشت اس وقت مستحکم ہے

اسلام آباد: مشیر برائے خزانہ و محصولات ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ نے کہا ہے کہ ملکی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے