جس پراپرٹی کے بارے میں سوال کیا جارہا ہے وہ مسجد کے لیے تھی

جس پراپرٹی کے بارے میں سوال کیا جارہا ہے وہ مسجد کے لیے تھی

اسلام آباد: درخواست گزار کے وکیل نے کہا کہ ایک ہی نوعیت کی 24 ایف آئی آرز ہیں، جس میں کہا گیا ہے کہ حافظ سعید اور دیگر جبکہ میرے موکل اور دیگر نامزد لوگ دہشت گرد نہیں ہیں

حافظ سعید کی جن اثاثوں کا ایف آئی آر میں ذکر کیا گیا ہے وہ مدرسے ہیں، اس پر سرکاری وکیل نے کہا کہ ہمیں اس کیس سے متعلق آگاہ نہیں کیا گیا۔
عدالت نے دلائل مکمل ہونے پر درخواست کو سماعت کے لیے منظور کرلیا، ساتھ ہی پنجاب حکومت اور محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) سے تفصیلی رپورٹ طلب کرلی۔
ساتھ ہی معاملے کی مزید سماعت 28 اکتوبر تک ملتوی کردی گئی۔
عدالت میں جماعت الدعوۃ کی ذیلی تنظیم کے سیکریٹری ملک ظفر اقبال نے حافظ سعید سمیت 65 رہنماؤں کے خلاف درج مقدمات کے اخراج کے لیے درخواست دائر کی تھی۔
اس درخواست میں وفاقی اور پنجاب حکومت، ریجنل ہیڈ کوارٹرز سی ٹی ڈی کو فریق بنایا گیا تھا۔
ملک ظفر اقبال، جن کا نام پولیس رپورٹس میں بھی موجود ہے، ان کی جانب سے دائر درخواست کے مطابق مقدمات کا اندراج ‘بغیر قانونی اختیار کے ہے اور یہ قانونی طور پر موثر نہیں’۔
درخواست میں کہا گیا تھا کہ جس پراپرٹی کے بارے میں سوال کیا جارہا ہے وہ مسجد کے لیے تھی اور اسی مقصد کے لیے اس کا استعمال ہوا، لہٰذا درج کی گئی 23 ایف آئی آرز ‘قانونی اختیارات سے تجاوز ہے’۔
ساتھ ہی یہ بھی کہا گیا تھا کہ یہ اثاثے ‘کبھی بھی دہشت گردی کی مالی معاونت کے لیے استعمال نہیں ہوئے اور نہ ہی ان سنگین الزامات کی حمایت میں ریکارڈ پر کوئی ناقابل تردید ثبوت ہیں’۔
عدالت میں دائر درخواست میں استدعا کی گئی کہ عدالت یہ قرار دے کہ درخواست گزاروں اور اس کے ساتھیوں کا لشکر طیبہ سے کوئی تعلق نہیں، لہٰذا یہ ایف آئی آرز ‘قانونی اختیار سے تجاوز ہے اور یہ قانونی طور پر موثر نہیں’۔
ان 2 قائدین کے علاوہ جماعت الدعوۃ کے جن رہنماؤں پر مقدمات درج کیے گئے تھے، ان میں ملک اقبال ظفر، امیر حمزہ، محمد یحیٰ عزیز، محمد نعیم، محسن بلال، عبدالرقیب، ڈاکٹر احمد داؤد، ڈاکٹر محمد ایوب، عبداللہ عبید، محمد علی اور عبدالغفار شامل تھے۔
سی ٹی ڈی کی جانب سے پنجاب کے 5 شہروں میں مقدمات درج کیے گئے تھے، جس میں کہا گیا تھا کہ غیرمنافع بخش تنظیموں اور فلاحی اداروں، الانفال ٹرسٹ، دعوت الارشاد ٹرسٹ اور معاذ بن جبل ٹرسٹ وغیر کے ذریعے جمع ہونے والے فنڈز سے جماعت الدعوۃ دہشت گردی کے لیے مالی معاونت کرتی ہے۔
ان غیر منافع بخش تنظیموں پر اپریل سے پابندی عائد کردی گئی تھی کیونکہ سی ٹی ڈی کو اپنی تفصیلی تحقیقات میں معلوم ہوا تھا کہ ان اداروں کے جماعت الدعوۃ اور اس کی قیادت سے تعلقات تھے اور ان پر پاکستان میں جمع کیے گئے فنڈز سے بڑے اثاثے/جائیداد بناکر دہشت گردی کی مالی معاونت کا الزام تھا۔

یہ بھی پڑھیں

31 مئی کو لاک ڈاؤن میں نرمی یا سختی کا فیصلہ کیا جائے گا

اسلام آباد : وزیراعظم عمران خان نے قومی رابطہ کمیٹی کا اجلاس 31 مئی کو …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے