برطانوی وزیر اعظم کے بھائی نے بھی وزارت چھوڑ دی

برطانوی وزیر اعظم کے بھائی نے بھی وزارت چھوڑ دی

برطانیہ کے وزیراعظم بورس جانسن کے بھائی جو جانس نے بریگزٹ کے تنازع میں خاندانی وفاداری اور قومی مفاد میں الجھاؤ کے باعث پارلیمنٹ اور وزارت سے استعفیٰ دے دیا۔

جو جانسن خاندانی مسائل کو اپنے استعفے کی وجہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ میں خاندانی وفاداری اور قومی مفاد کے درمیان الجھ کر رہ گیا۔جو جانسن نے ٹوئٹ میں کہا کہ نو برس تک لندن کے مضافاتی علاقے آرپنگٹن سے عوام کی نمائندگی اور تین وزرائے اعظم کے ساتھ کام کرنا بڑے اعزاز کی بات ہے تاہم میں گزشتہ چند ہفتوں سے خاندانی وفاداری اور قومی مفاد کے درمیان الجھ کر رہ گیا۔جو جانسن نے دوہزار سولہ میں یورپی یونین سے علیحدگی کی سخت مخالفت کی تھی تاہم بورس جانسن کی جانب سے وزارت عظمیٰ کا منصب سنبھالنے کے بعد انہیں وزیر جامعات اور سائنس کی وزارت ملی تھی۔

زمبابوے کے سابق صدر رابرٹ موگابے 95 برس کی عمر میں چل بسے

یہ بھی پڑھیں

ٹرمپ نے سیاسی حریف جو بائیڈن کو پاگل سے قدرے بہتر قرار دے دیا

واشنگٹن:  امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے سیاسی حریف جوبائیڈن پر وار کرتے ہوئے انہیں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے