جی آئی ڈی سی کے معاملے پر سپریم کورٹ میں کئی درخواستیں جمع ہیں

جی آئی ڈی سی کے معاملے پر سپریم کورٹ میں کئی درخواستیں جمع ہیں

اسلام آباد: جی آئی ڈی سی کے معاملے پر سپریم کورٹ میں کئی درخواستیں جمع ہیں جن میں سے ایک خیبر پختونخوا کے 499 سی این جی اسٹیشنز کی جانب سے مشترکہ طور پر سینیئر وکیل مخدوم علی خان کی جانب سے پشاور ہائی کورٹ کے 31 مئی 2017 کے احکامات کے خلاف دائر کی گئی تھی

درخواست میں سی این جی اسٹیشنز کو ملنے والی گیس پر جی آئی ڈی سی لاگو کرنے اور اکٹھا کرنے کو روکنے کے احکامات کا مطالبہ کیا گیا۔
جی آئی ڈی سی کا معاملہ متنازع اس وقت ہوا جب حکومت نے گزشتہ ہفتے متنازع آرڈیننس جاری کیا تھا جس کے تحت فرٹیلائزر، جنرل انڈسٹری، آئی پی پیز، پاور جنریشن، کے الیکٹرک اور سی این جی سیکٹر وغیرہ جیسے بڑے کاروباروں کو 210 ارب روپے کی مالیاتی ایمنسٹی فراہم کی جانی تھی۔
وزیر اعظم کے دفتر سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق جنوری 2012 سے دسمبر 2019 کے درمیان جی آئی ڈی سی پر قانونی جنگ کی وجہ سے پھنسی رقم 417 ارب سے تجاوز کرگئی ہے۔
پی ٹی آئی حکومت نے 27 اگست کو صدارتی آرڈیننس جاری کیا تھا جس کے تحت صنعتوں سے 420 ارب روپے کے جی آئی ڈی سی تنازع کے حوالے سے تصفیے کی پیشکش کی گئی تھی۔
آرڈیننس کے تحت صنعت، فرٹیلائزر اور سی این جی کے شعبے 50 فیصد بقایاجات کو 90 روز میں جمع کراکر مستقبل کے بلوں میں 50 فیصد تک رعایت حاصل کرسکتے ہیں جبکہ انہیں اس حوالے سے عدالتوں میں موجود کیسز بھی ختم کرنے ہوں گے۔

یہ بھی پڑھیں

آئی ایم ایف کا یہ وفد پاکستان کے دورےمیں اہم ملاقاتیں کرےگا

آئی ایم ایف کا یہ وفد پاکستان کے دورےمیں اہم ملاقاتیں کرےگا

اسلام آباد: آئی ایم ایف کا یہ ایس او ایس مشن ہے ، جو کہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے