پاکستان میں پولیو کے بڑھتے کیسز کے پیچھے خیبر پختونخوا کو مرکزی وجہ قرار دیا

پاکستان میں پولیو کے بڑھتے کیسز کے پیچھے خیبر پختونخوا کو مرکزی وجہ قرار دیا

اسلام آباد: صوبائی پولیو پروگرام ایک ہی وقت میں دو لیکن مختلف اسٹریٹیجک نقطہ نظر کے استعمال کی وجہ سے اپنے کردار اور ذمہ داریوں کی نشاندہی میں ناکام رہا ہے

ٹی اے جی کی سفارشات میں پاکستان میں پولیو کے بڑھتے کیسز کے پیچھے خیبر پختونخوا کو مرکزی وجہ قرار دیا گیا۔
اعلیٰ جائزہ گروپ نے اپنی رپورٹ میں کہا کہ ‘خیبر پختونخوا کا ایمرجنسی آپریشنز سینٹر وفاقی سینٹر سے منسلک نہیں ہے جس کی وجہ سے صوبائی ایمرجنسی آپریشنز سینٹر کا کردار اور ذمہ داریاں غیر واضح ہیں۔ملک میں رواں سال اب تک رپورٹ ہونے والے پولیو کے 58 کیسز میں سے خیبر پختونخوا میں 44 کیس سامنے آئے۔
ایڈوائزری گروپ نے تسلیم کیا کہ سابق قبائلی علاقوں (فاٹا) کا خیبر پختونخوا میں انضمام اور انگلی میں جعلی مارکِنگ پولیو کے خاتمے میں بڑی رکاوٹ ہیں، تاہم اس کا کہنا تھا کہ صوبے کے پولیو پروگرام میں استعمال ہونے والی مواصلاتی اسٹریٹجی ‘اس مقصد کے لیے مناسب نہیں ہے۔
خیبر پختونخوا کے برعکس ‘ٹی اے جی’ نے بلوچستان میں پولیو کے خاتمے کی کوششوں کی تعریف کی۔

یہ بھی پڑھیں

31 مئی کو لاک ڈاؤن میں نرمی یا سختی کا فیصلہ کیا جائے گا

اسلام آباد : وزیراعظم عمران خان نے قومی رابطہ کمیٹی کا اجلاس 31 مئی کو …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے