سندھ اسمبلی میں ایک سال کے دوران حکومتی کارکردگی غیر اطمینان بخش رہی

سندھ اسمبلی میں ایک سال کے دوران حکومتی کارکردگی غیر اطمینان بخش رہی

کراچی: سندھ اسمبلی میں صوبائی وزرا نے مختلف محکموں سے متعلق ساڑھے3 ہزار سے زائد سوالات کے صرف10 فیصد سوالات کے جواب ایوان میں پیش کیے

محکمہ منصوبہ بندی و ترقیات، لینڈ یوٹیلائزیشن، داخلہ اور خوراک سندھ حکومت کے ایسے محکمے ہیں جن سے متعلق پوچھے گئے سوالات کے تحریری جوابات سندھ اسمبلی کے ایجنڈ ے پر شامل ہی نہیں کیے گئے۔
سندھ اسمبلی ریکارڈ کے مطابق مختلف محکموں کے انچارج وزیراعلیٰ مراد علی شاہ نے پہلے پارلیمانی سال کے دوران ایک بھی مرتبہ محکمہ داخلہ و پولیس سے متعلق پوچھے گئے سوالات کے جوابات ایوان میں نہیں دیے۔
محکمہ صحت، توانائی اور جنگلات و جنگلی حیات نے سب سے زیادہ سوالات کے جوابات ایوان میں پیش کیے جبکہ کھیل و امور نوجوانان، سروسز اینڈ جنرل ایڈمنسٹریشن، اینٹی کرپشن ڈپارٹمنٹ، منصوبہ بندی و ترقیات، خوراک کے محکموں کے سوالات ایجنڈے میں شامل ہی نہیں کیے گئے، ریکارڈ کے مطابق سندھ حکومت کے 10 محکموں کے سوالات کیلیے سندھ اسمبلی کے طویل ترین سیشنز میں کوئی دن وقفہ سوالات کیلیے مختص ہی نہیں کیا گیا۔
سب سے زیادہ وقفہ سوالات صحت و بہبود آبادی، جیل خانہ جات، ثقافت و سیاحت، جگلات وجنگلی حیات اور لائیو اسٹاک ریونیو ریلیف اور قانون و پارلیمانی امور کے وقفہ سوالات سندھ اسمبلی اجلاس کے ایجنڈے میں شامل کیے گئے۔
محکمہ صحت نے 33 اور توانائی نے 30 سوالات کے جواب دیے، محکمہ انسانی حقوق، مائینز اینڈ منرل اور ماحولیات کی کارکردگی انتہائی ناقص رہی ان کے صرف ایک ایک سوال کا جواب ایوان میں دیا گیا

یہ بھی پڑھیں

پی ایس 11 کے ضمنی انتخاب لاڑکانہ میں پاکستان پیپلز پارٹی کے جیالے کو شکست

پی ایس 11 کے ضمنی انتخاب لاڑکانہ میں پاکستان پیپلز پارٹی کے جیالے کو شکست

لاڑکانہ : لاڑکانہ کے حلقے پی ایس 11 کے ضمنی انتخاب کے غیر حتمی غیر …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے