ہم قانونی کارروائی اور جامع بات چیت کے لیے ہر فرد کے حقوق کا احترام کرتے ہیں

ہم قانونی کارروائی اور جامع بات چیت کے لیے ہر فرد کے حقوق کا احترام کرتے ہیں

امریکا: اس علاقے کے دورے کے بعد واپس آنے والے عہدیدار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر کہا کہ ‘ہم انفرادی حقوق کے احترام، قانونی طریقہ کار کی تعمیل اور ایک جامع مذاکرات پر زور دیتے ہیں

بھارتی حکام نے اس فیصلے کے خلاف کسی قسم کی مزاحمت سے بچنے کے لیے کشمیت میں مواصلاتی روابط مکمل طور منقطع اور نقل و حرکت پر سخت پابندی عائد کررکھی ہے۔
مذکورہ فیصلے کے بعد سے اب تک مقبوضہ کشمیر میں کم از کم 4 ہزار افراد کو حراست میں لیا جاچکا ہے۔
اس ضمن میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بذریعہ فون بھارتی وزیراعظم نریندر مودی اور پاکستانی وزیراعظم عمران خان نے بات کی اور دونوں رہنماؤں کو کشیدگی کم کرنے پر زور دیا۔
بھارت کا زکر کرتے ہوئے اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کے عہدیدار نے کہا کہ ’ہم قانونی کارروائی اور جامع بات چیت کے لیے ہر فرد کے حقوق کا احترام کرتے ہیں‘۔
واشنگٹن نے دونوں جوہری طاقتوں بھارت اور پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ مسلم اکثریت کے حامل پہاڑی خطے کشمیر کے تنازع کے حال کے لیے براہِ راست بات چیت کی جائے۔
اس سلسلے میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مقبوضہ کشمیر کی ‘خطرناک’ صورتحال پر ایک مرتبہ پھر ثالثی کی پیش کش کی ہے۔

یہ بھی پڑھیں

برطانیہ میں پندرہ جون سے دکانیں کھل جائیں گی

لندن: برطانوی حکومت نے ملک میں لاک ڈاؤن ختم کرنے کا اعلان کردیا وزیراعظم بورس …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے