کرنٹ لگنے کے واقعات میں اضافے کے اصل ذمے دار بلدیاتی اور شہری ادارے

کرنٹ لگنے کے واقعات میں اضافے کے اصل ذمے دار بلدیاتی اور شہری ادارے

کراچی: بورڈ آف ڈائریکٹرز کے چیئرمین اکرام سہگل کے ساتھ ایک نشست کا اہتمام کیا، اکرام سہگل نے بتایا کہ بورڈ آف ڈائریکٹرز کے حالیہ اجلاس کو بجلی کمپنی کی انتظامیہ نے ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ کی بنیاد پر آگاہ کیا کہ کرنٹ لگنے کے صرف دو واقعات میں کے الیکٹرک کی ذمے داری بنتی ہے

ڈیفنس میں تین نوجوانوں کی ہلاکت کی ابتدائی تحقیقات میں یہ سامنے آیا ہے کہ یہ واقعہ ٹی وی کیبل کی وجہ سے پیش آیا جوکہ غیرقانونی طور پر کے الیکٹرک کے تار سے منسلک کی گئی تھی، انھوں نے بتایا کہ کے الیکٹرک کی ٹیم نے جب متعلقہ کھمبے سے بجلی کی فراہمی منقطع کی تو بھی پانی میں کرنٹ موجود تھا تو معلوم ہوا کہ دراصل انٹرنیٹ کا کیبل ٹوٹ کر کھمبے سے لپٹ گیا اور نتیجے میں کھمبے اور اس کے گرد کھڑے پانی میں کرنٹ آیا۔
کے الیکٹرک کی تحقیقات کے مطابق تقریباً8واقعات میں بجلی کے کھمبے میں انٹرنیٹ کیبل کی وجہ سے کرنٹ آیا، انھوں نے بتایا کہ کے الیکٹرک جب بھی اپنے انفرااسٹرکچر پر سے کیبل اور انٹرنیٹ کے کیبل اتارنے کی کوشش کی ہے ہر علاقے میں موجودہ طاقتور مافیاز کے بدلے میں کے الیکٹرک کے انفرااسٹرکچر کو نقصان پہنچانا شروع کردیتی ہیں۔
اکرام سہگل نے کہا کہ کرنٹ لگنے کے واقعات میں اضافے کے اصل ذمے دار بلدیاتی اور شہری ادارے ہیں جنھوں نے10سالوں سے بارش کے پانی کی نکاسی کا کوئی انتظام نہیں کیا، انھوں نے کہا کہ قانون نافذ کرنے والے اداروں نے کراچی کو دہشت گردی سے تو محفوظ بنادیا ہے اب انھیں ان مافیاز سے بھی شہریوں کو نجات دلانا ہوگی۔
بلدیاتی اور شہری اداروں میں موجود چند عناصر، غیرقانونی کنڈا سسٹم اور مقامی کیبل اور انٹرنیٹ سروس پروائیڈرز اب مافیاز بن چکے ہیں، کرنٹ لگنے کے ایک واقعہ کی درج کی جانے والی ایف آئی آر میں انھیں نامزد کرنے کے سوال پر اکرام سہگل نے کہا کہ انھیں نہیں پتہ کہ میئر کراچی وسیم اختر کو ان سے کیا مخاصمت ہے۔
آزادانہ تحقیقات ایک ماہ میں مکمل ہوجائیں گی، انھوں نے بتایا کہ اس کے علاوہ کے الیکٹرک نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا) اور پولیس کی تحقیقات میں بھی مکمل تعاون کررہے ہیں۔
شنگھائی الیکٹرک کی جانب سے کے الیکٹرک کے اکثریتی شیئرز کی خریداری کی پیشکش کے معاملے پر اکرام سہگل پرامید دکھائی دیے انھوں نے بتایا کہ شنگھائی الیکٹرک کے ساتھ بات چیت جاری ہے انھوں نے کہا کہ اس معاملے چند رکاوٹیں ہیں جن میں ایک بڑی رکاوٹ نیپرا کی جانب سے ملٹی ایئر ٹیرف کے نوٹیفیکیشن میں اجرا تاخیر تھی۔

یہ بھی پڑھیں

ساحلی علاقے صوبائی حکومت کے زیر انتظام لانے کا فیصلہ

ساحلی علاقے صوبائی حکومت کے زیر انتظام لانے کا فیصلہ

کراچی: قانونی مسودے کی سندھ اسمبلی سے منظوری کے بعد کراچی کے تمام ساحل سندھ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے