سی پیک اتھارٹی کے قیام سے50 نوکریاں خطرے میں پڑ گئیں

سی پیک اتھارٹی کے قیام سے50 نوکریاں خطرے میں پڑ گئیں

اسلام آباد: آئی ایم ایف نے موجودہ مالی سال سے گورنمنٹ گارنٹی کی حد 1.6 ٹریلین روپے تک مقرر کررکھی ہے اور ساتھ ہی بیرونی ادائیگیوں کے بقایا جات بھی نہ روکے جانے کی پابندی لگا رکھی ہے

ان پابندیوں کی وجہ سے حکومت پاکستان ریلوے کی ایم ایل ون جیسے بڑے ٹھیکے نہیں دے سکتی۔اجلاس میں وزیراعظم کو گوادرکے 300 میگا واٹ بجلی کے منصوبے ،11ہزار میگاواٹ کے کوہالہ ہائیڈروپاور پراجیکٹ ،9 ارب ڈالر کے ایم ایل ون پراجیکٹ ،ایسٹ بے ایکسپریس وے ،گوادرماسٹرپلان اورگوادرفری زون کیلیے ٹیکس مراعات کے معاملات پر بریفنگ دی گئی۔
وزیراعظم نے ان زیرالتوا معاملات کو حل کرنے کے عزم کا اظہارکرتے ہوئے بیوروکریسی کو ان منصوبوں کی راہ میں تمام رکاوٹیں دور کرنے کی ہدایت کی ۔
وزیراعظم نے سیکریٹری پاوراور سیکریٹری آبی وسائل کو چیف سیکریٹری آزاد کشمیر سے میٹنگ کی ہدایت کی ۔بیوروکریسی سطح کی اس ملاقات کے بعد وزیراعظم پاکستان اور وزیراعظم آزاد کشمیر میں حتمی ملاقات ہوگی۔
منصوبے میں تاخیرحکومت آزادکشمیر کے ان تحفظات کی وجہ سے ہورہی ہے کہ منصوبے کی تکمیل سے اس ریجن میں پانی کا مسئلہ پیداہوسکتا ہے۔
اس منصوبے پر حکومت پاکستان اورچین کے مابین 2017ء میں دستخط ہوئے تھے۔وزارت منصوبہ بندی اس پراجیکٹ کی قانونی کلیئرنس کیلئے پبلک پروکیورمنٹ اتھارٹی اور تحقیقاتی اداروں سے کلیئرنس مانگ رہی ہے ۔
سی پیک کے تحت دو شاہراہوں کے میگا پراجیکٹس کے کیس نیب کے پاس جانے کے بعد بیورکریسی اس منصوبے میں پیشرفت کرنے سے کترا رہی ہے۔
کن سلٹنٹس کا انتظام کریں اوراس ریل پراجیکٹ کیلئے چین سے تازہ یقین دہانیاں حاصل کریں۔ابھی یہ طے کرنا باقی ہے کہ آئی ایم ایف کے تین سالہ پروگرام کے دوران وزارت خزانہ 9 ارب ڈالر کا قرضہ لے بھی سکتی ہے یا نہیں۔
وزیراعظم نے چیف سیکریٹری بلوچستان ،وزارت بحری امور اور وزارت توانائی کوہدایت کی وہ 300 میگاواٹ کے گوادر پاور پلانٹ کی تعمیر میں حائل تمام رکاوٹیں دور کریں۔
وزیراعظم نے وزارت خزانہ کو ہدایت کی کہ وہ سکھر ملتان موٹر وے کو چالو کرنے کیلیے موٹروے پولیس کی بھرتی کی منظوری دے اور اس کے افتتاح کی تاریخ فائنل کی جائے۔

یہ بھی پڑھیں

آئی ایم ایف کا یہ وفد پاکستان کے دورےمیں اہم ملاقاتیں کرےگا

آئی ایم ایف کا یہ وفد پاکستان کے دورےمیں اہم ملاقاتیں کرےگا

اسلام آباد: آئی ایم ایف کا یہ ایس او ایس مشن ہے ، جو کہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے