مودی کے اقدامات کیخلاف بھارت میں بھی آوازیں اٹھنے لگی

نئی دہلی: بھارتی مصنفہ ارون دھتی رائے نے بھارتی حکومت کو بدمعاش قرار دے دیا

بھارتی مصنفہ ارون دھتی رائے کا کہنا تھا کہ مقبوضہ کشمیر کا کرفیو ختم ہونے کے بعد بہت کچھ ہوگا جو حکومت کے لیے انتہائی پریشان کن ہے۔

مودی کےظالمانہ اقدامات کیخلاف بھارت میں بھی آوازیں اٹھنے لگی۔

بھارتی ریاست ہریانہ کے وزیراعلیٰ نے خواتین کے حوالے سے نازیبا الفاظ استعمال کیے جس پر بھارت کی خواتین میں شدید غم و غصہ پایا جارہا ہے

بھارتی مصنفہ نے اپنی ہی حکومت کو بدمعاش قرار دیتے ہوئے کہا کہ وزیراعلیٰ ہریانہ کے خواتین پر ریمارکس گھٹیا ترین ہیں، ایسے بدمعاشوں کو حکومتی عہدہ زیب نہیں دیتا لہذا فوری طور پر ہٹایا جائے۔

مقبوضہ کشمیر کی سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کی صاحبزادی التجا مفتی کا کہنا تھا کہ بھارتی حکومت کے ظالمانہ اقدام کی وجہ سے کشمیری بنیادی انسانی حقوق سے بھی محروم کردیے گئے۔ اُن کا کہنا تھا کہ حراست میں لیے جانے والے کشمیریوں کو جانوروں کی طرح پنجرے میں قید کیا گیا ہے۔

مقبوضہ کشمیرمیں کرفیو کے نفاذ کو آج تیرہواں روز گزر گئے، زندگی بد ستور مفلوج اور کمیونیکیشن کا بلیک آؤٹ ہے جبکہ کھانے پینے کی اشیا اور دواؤں کی قلت ہوگئی ہے۔

 

 

یہ بھی پڑھیں

چینی عدالت نے پاکستانی طالبعلم کو قتل کرنے والے شہری کو سزائے موت سنادی

چینی عدالت نے پاکستانی طالبعلم کو قتل کرنے والے شہری کو سزائے موت سنادی

بیجنگ: عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ کہ کونگ کو ایک بالغ شخص ہیں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے