پاکستان کی مسئلہ کشمیر پر ہنگامی اجلاس بلانے کی درخواست

اسلام آباد: وزیر خارجہ نے سلامتی کونسل کے صدر کو خط لکھا ہے جس میں انہوں نے مسئلہ کشمیر پر ہنگامی اجلاس بلانے کی درخواست کر دی۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ مجھے خدشہ ہے کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں نئے قتل عام کرنے کا ارادہ رکھتا ہے

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہندوستان یہ سمجھتا ہے کہ وہ ان ہتھکنڈوں سے کشمیریوں کی آواز کو دبالے گا تو یہ اس کی غلط فہمی ہے

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اپنے پیغام میں کہا ہے کہ پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس، نیشنل سیکیورٹی کمیٹی اور کابینہ نے مسئلہ کشمیر پر سلامتی کونسل جانے کا فیصلہ دیا ہے جب کہ معاملہ سلامتی کونسل لے جانے سے قبل چین سے مشاورت کے لیے دورہ کیا جس پر چینی حکام نے پاکستان کو اپنی مکمل حمایت کا یقین دلایا کیوں کہ چین سمجھتا ہے کہ بھارت کا حالیہ اقدام غیر آئینی، یک طرفہ اوراقوام متحدہ کی قراردادوں کے منافی ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہم نے آج سیکیورٹی کونسل کے صدر کو خط ارسال کر دیا ہے جو کہ اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ملیحہ لودھی نے بھیجا ہے، ہم نے درخواست کی ہے کہ یہ خط فی الفور سیکیورٹی کونسل کے تمام اراکین تک پہنچایا جائے خط میں سیکیورٹی کونسل کا خصوصی اجلاس طلب کرنے اور بھارت کے غیر قانونی اقدامات کو زیر بحث لانے کی درخواست کی ہے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ بھارت کے ان اقدامات نے نہ صرف خطے بلکہ عالمی امن کو خطرے میں ڈالا ہے، طاقت کے ذریعے کشمیریوں کی حق خود ارادیت کی تحریک کو کچلنا خام خیالی ہے، یہ اقدام کشمیریوں کی فلاح و بہبود کے لیے ہے تو نو دنوں سے کرفیو کیوں مسلط ہے؟ کئی دہائیوں سے تعینات 7 لاکھ فوج کشمیریوں کو زیر نہیں کرسکی تو ایک لاکھ 80 ہزار کی نئی کمک بھی ناکام ٹھہرے گی۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہندوستان یہ سمجھتا ہے کہ وہ ان ہتھکنڈوں سے کشمیریوں کی آواز کو دبالے گا تو یہ اس کی غلط فہمی ہے اور وہ یہ سمجھتا ہے کہ 35 اے کے خاتمے سے مسلمانوں کو اقلیت میں تبدیل کردے گا تو یہ اس کی بھول ہے کشمیری اس اقدام کو تسلیم کریں گے اور نہ پاکستان کو یہ قابلِ قبول ہیں، بھارت نے یہ اقدام اٹھا کر بہت بڑی حماقت کی ہے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ مجھے خدشہ ہے کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں نئے قتل عام کرنے کا ارادہ رکھتا ہے، تشویش یہ ہے کہ بھارت توجہ ہٹانے کے لیے پلوامہ طرز کی کوئی بھی حرکت کرسکتا ہے اس صورتحال کی نزاکت کو بھانپتے ہوئے ہم نے سیکیورٹی کونسل کا ہنگامی اجلاس بلانے کا مطالبہ کیا ہے، ہم اپنے دفاع میں ہرحد تک جا سکتے ہیں اور 27 فروری کو اس کا عملی مظاہرہ ہوچکا ہے۔

شاہ محمود نے کہا کہ پورے پاکستان میں کشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی ہوگا جب کہ 15 اگست کو یوم سیاہ ہو گا اور دنیا دیکھے گی کہ ہر دار الخلافہ میں ان اقدامات کے خلاف آواز بلند ہو گی

شاہ محمود نے کہا کہ کشمیریوں کو پیغام دینا چاہتا ہوں کہ آپ تنہا نہیں ہیں ہم آپ کے ساتھ ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

شیخ رشید نے کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے جلسوں کا اعلان کردیا

شیخ رشید نے کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے جلسوں کا اعلان کردیا

راولپنڈی: وزیر ریلوے شیخ رشید نے کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے جلسوں کا اعلان …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے