طالبان افغان حکومت کو ایک کٹھ پتلی ریاست قرار دیتے ہیں

طالبان افغان حکومت کو ایک کٹھ پتلی ریاست قرار دیتے ہیں

کابل: طالبان افغان حکومت کو ایک کٹھ پتلی ریاست قرار دیتے ہیں، ان کے مطابق اشرف غنی ان کے کہنے پر کام کرتے ہیں جن کے وہ غلام ہیں

افغان حکام چاہتے ہیں کہ طالبان ان سے بھی مذاکرات کرہیں جبکہ طالبان شروع دن سے ہی حکومت سے مذاکرات کرنے سے انکاری ہیں۔
افغانستان کے صدر اشرف غنی نے ایک مرتبہ پھر طالبان کو حکومت کے ساتھ مذاکرات کا مشورہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ اب افغانستان میں امن کے لیے صحیح وقت ہے۔
کابل میں یورپی یونین انسداد دہشت گردی کانفرنس میں اشرف غنی نے کہا کہ حقیقت پر مبنی امن کے لیے گزشتہ 18 برس میں ٹھیک وقت نہیں تھا۔
انہوں نے کہا کہ اگر یہ وقت ہاتھ سے نکل گیا تو نقصان کی ذمہ داری بڑی ہوگی۔ اشرف غنی نے طالبان اور افغان حکومت کے دوران دوطرفہ مذاکرات پر زور دیا۔

یہ بھی پڑھیں

برطانوی تیل بردار جہاز کو عالمی قوانین کی خلاف کرنے کے الزام میں قبضے میں لے لیا

برطانوی تیل بردار جہاز کو عالمی قوانین کی خلاف کرنے کے الزام میں قبضے میں لے لیا

تہران: ایرانی رضاکار فورس بیسج (سپاہ پاسداران انقلاب اسلامی) کے شعبہ تعلقات عامہ کی جانب …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے