ٹرمپ کی ایران مخالف پالیسیوں پر سابق وزیر دفاع کی تنقید

ٹرمپ کی ایران مخالف پالیسیوں پر سابق وزیر دفاع کی تنقید

امریکہ کے سابق وزیر دفاع نے صدر ٹرمپ کی جانب سے سیاسی مقاصد کے لئے امریکی فوج کے استعمال اور ایٹمی معاہدے سے علیحدگی کے بارے میں ان کے فیصلے پر تنقید کی ہے۔

ارنا کی رپورٹ کے مطابق ایشٹن کارٹر نے امریکہ کے یوم آزادی کے جشن میں ٹینکوں کی نمائش کی طرف اشارہ کرتے ہوئے اعلان کیا ہے کہ امریکی فوج کوئی دکھاوے کا وسیلہ نہیں اور اسے ممکنہ جنگ کی مشق کرنا چاہئے۔
ایشٹن کارٹر نے ایران اور امریکہ کے درمیان ممکنہ جنگ پر خبردار کرتے ہوئے کہا کہ جب وہ وزیر دفاع تھے تو امریکہ کی نیوی کے دس اہلکار ایران کے سمندری حدود میں داخل ہو گئے تھے جنھیں گرفتار کرنے کے کچھ بعد چھوڑ دیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایک انتباہ تھا اور اگر آج ایسا کوئی واقعہ رونما ہو جائے تو یہ واقعہ ناخواستہ جنگ میں تبدیل ہو سکتا ہے۔
امریکہ کے سابق وزیر دفاع نے کہا کہ ایٹمی معاہدہ، جوہری مسائل سے مربوط تھا جس سے ایران کے بارے میں ایک مسئلے کو حل کئے جانے میں مدد بھی ملی اور ایسا موثر سمجھوتہ امریکہ کے مفاد میں تھا پھر بھی امریکہ اس معاہدے سے نکل گیا۔

دوحہ مذاکرات میں جمیلہ افغان خواتین کی آواز بن گئیں

یہ بھی پڑھیں

برطانیہ میں پندرہ جون سے دکانیں کھل جائیں گی

لندن: برطانوی حکومت نے ملک میں لاک ڈاؤن ختم کرنے کا اعلان کردیا وزیراعظم بورس …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے