نانا پاٹیکر کو جنسی ہراساں کیس میں کلین چٹ مل گئی

نانا پاٹیکر کے خلاف اداکارہ تنوشری دتہ کی جانب سے دائر کروایا گیا جنسی طور پر ہراساں کا کیس بند

بھارتی پولیس نے منظم ثبوت نہ ملنے پر نانا پاٹیکر کے خلاف درج کروائے گئے مقدمے کو بند کرتے ہوئے اداکار کو کلین چٹ دے دی۔

ٹائمز آف انڈیا کے مطابق پولیس کو تفتیش کے دوران اداکارہ کی جانب سے لگائے گئے الزامات کو منظم ثبوت نہیں ملے جس پر پولیس نے نانا پاٹیکر کے خلاف درج کیا گیا مقدمہ خارج کردیا۔

رپورٹ کے مطابق جہاں یہ بھارت میں پہلا می ٹو مہم کے ذریعے سامنے آنے والا واقعہ تھا، وہیں یہ پہلا کیس بھی بن گیا جسے پولیس نے ثبوت نہ ملنے پر بند کیا۔

اداکارہ تنوشری دتہ نے گذشتہ برس ستمبر میں نانا پاٹیکر پر جنسی ہراساں کا الزام لگا کر جہاں سب کو حیران کیا تھا، وہیں ان کی جانب سے جنسی ہراساں کے خلاف بات کرنے کے بعد بھارت میں ’می ٹو‘ مہم کا آغاز ہوا تھا۔

تنوشری دتہ نے ایک ٹی وی انٹرویو کے دوران انکشاف کیا تھا کہ 2008 میں فلم ہارن اوکے پلیز کی شوٹنگ کے دوران نانا پاٹیکر اور فلم کے عملے نے ان کے ساتھ برا سلوک کیا۔

اداکارہ نے الزام عائد کیا تھا کہ نانا پاٹیکر ان کے ساتھ اسی فلم کے گانے "نتھنی اتارو” میں نازیبا منظر شوٹ کروانا چاہتے تھے۔

ابتدائی طور پر تنوشری دتہ نے نانا پاٹیکر کے خلاف صرف میڈیا میں ہی بیانات دیے لیکن بعد ازاں اکتوبر2018 کو ممبئی میں پولیس تھانے جاکر 2008 میں فلم ‘ہارن اوکے پلیز’ کے دوران اپنے ساتھ ہونے والے واقعے کی رپورٹ درج کروائی تھی۔

تنوشری دتہ کی جانب سے مقدمہ دائر کرائے جانے کے بعد پولیس نے اکتوبر 2018 میں ایک دہائی قبل جنسی طور پر ہراساں کرنے کے واقعے کی باقاعدہ تفتیش کا آغاز کیا تھا اور واقعے کی تحقیقات ایک سال تک رہیں۔

لیکن اب پولیس نے منظم ثبوت نہ ملنے پر نانا پاٹیکر کے خلاف درج کروائے گئے مقدمے کو بند کرتے ہوئے اداکار کو کلین چٹ دے دی۔

پولیس کی جانب سے کیس کو بند کرنے کے حوالے سے زیادہ تفصیلات جاری نہیں کی گئی، تاہم بتایا گیا کہ تفتیشی افسران کو ثبوت نہیں ملے، جس بناء پر کیس کو خارج کیا جا رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

کرتارپور راہداری کا افتتاح حقیقی سنگ میل ہے

کراچی: اداکارہ مہوش حیات نےکہا ہے کہ کرتارپور راہداری کا افتتاح کرنا پاکستانیوں کے کشادہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے