وزیراعظم خود کو بچانے کیلئے بھارتی و اسرائیلی لابی سے مدد مانگ رہے ہیں، عمران خان

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کے چیرمین عمران خان کا کہنا ہے کہ جب بھی نواز شریف کے خلاف تحریک شروع ہو تو ایل او سی پر گڑ بڑ  شروع ہو جاتی  جب کہ وزیراعظم خود کو پاناما لیکس سے بچانے کے لئے بھارتی و اسرائیلی لابی سے مدد مانگ رہے ہیں۔

عمران خان کا کہنا ہے کہ بھارت میں بھارتی امپائرز کی موجودگی میں انہیں ہرایا تاہم 2 نومبر کا میچ سب سے زبردست میچ ہے اس دن ہم پاکستان کے مستقبل کامیچ کھیلیں گے، نوازشریف ڈاکوؤں کی ٹیم کے کپتان ہیں اور آصف زرداری ملک کی بڑی بیماری ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اسفند یارولی، فضل الرحمان اور امیر مقام سمیت اکرم درانی بھی نوازشریف کی ٹیم میں ہیں، شہبازشریف نے بھی کرپشن سے بہت پیسہ بنایا۔

عمران خان نے کہا کہ جوقوم اپنی پاؤں پرکھڑی نہ ہوسکے وہ غلام ہوتی ہے، ایساپاکستان بنائیں گے جہاں لوگ نوکریاں ڈھونڈنے آئیں گے۔ انکا کہنا تھا کہ کرپشن کابادشاہ کرپشن میں پکڑا گیا، ہم 10لاکھ لوگ اسلام آباد لے کرجائیں گے، کشتیاں جلاکراسلام آباد پہنچیں گے اور نوازشریف سے استعفیٰ لیں گے جب کہ دھرنے میں ایمبولینس، طلبہ، سفارتکاروں کو راستہ دیں گے۔

اس سے قبل بنی گالہ میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ جب بھی نواز شریف کے خلاف تحریک شروع ہوتی ہے تو ایل او سی پر فائرنگ  یا پھر ملک میں دھماکے شروع ہو جاتے ہیں، ہم لوگ اس چیز کا جائزہ لے رہے ہیں کہ ان واقعات کا آپس میں آخر تعلق کیا ہے،موجودہ حکومت فوج کو بدنام کر رہی ہے اور نواز شریف کا اپنی فوج کو تنہا کرنے سے بڑا سیکیورٹی تھریٹ کیا ہو سکتا ہے، نواز شریف خود کو بچانے کے لئے بھارتی و اسرائیلی لابی سے مدد مانگ رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ کہ سیکیورٹی لیکس نواز شریف کی فوج کے خلاف سازش ہے، پاک فوج اور آئی ایس آئی کے خلاف امریکا سے جو بیان آیا تھا، ہونا تو یہ چاہیئے تھا کہ وزیر دفاع فوج کے خلاف سازشوں کا جواب دیں لیکن وہ شوکت خانم اسپتال کے پیچھے پڑے ہوئے ہیں، وزیر دفاع کا کام نواز شریف کا دفاع کرنا نہیں ہے۔

عمران خان نے کہنا تھا کہ آپریشن ضرب عضب سے لے کر بلوچستان اور کراچی سے لے کر چھوٹو گینگ کے خاتمے تک پاک فوج کا کردار سب سے زیادہ اہم ہے لیکن نواز حکومت پاک فوج کو تنہا کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہو سکتا ہے کہ اب موٹو گینگ کے لئے بھی پاک فوج کی ضرورت پڑ جائے، جھوٹ بول بول کر موٹو گینگ کے منہ پر اللہ کی لعنت پڑ چکی ہے اور ان کی شکلیں تبدیل ہو چکی ہیں۔

چیرمین تحریک انصاف نے کہا کہ شوکت خانم اسپتال کے خلاف پروپیگنڈا کیا جا رہا ہے، میرے خلاف کرپشن کے الزامات لگائے جا رہے ہیں تاکہ مجھے بلیک میل کر کے خاموش کرایا جا سکے لیکن حکومت کا کام الزام لگانا نہیں، تحقیقات کرنا ہوتا ہے، اگر شوکت خانم کے فنڈز میں کرپشن ہوئی ہے تو پھر 8 سال میں اس کی انکوائری کیوں نہیں کرائی گئی۔ انہوں نے کہا کہ پاناما لیکس پر تمام اپوزیشن جماعتوں نے ٹی او آرز بنائے لیکن نواز شریف احتساب سے بھاگ رہے ہیں، میں حکومت سے کہتا ہوں کہ جن ٹی او آرز پر نواز شریف کا احتساب ہونا ہے انہی پر میرا احتساب بھی کیا جائے، وزیراعظم پاناما لیکس کے معاملے پر بچ نہیں سکتے۔

عمران خان نے کہا کہ 2 نومبر کو اسلام آباد میں 10 لاکھ افراد جمع ہوں گے اور کوئی پولیس انہیں روک نہیں سکے گی، نواز شریف کے پاس دو ہی آپشن ہیں یا تو استعفیٰ دیں یا پھر تلاشی ، ہم جیلوں میں نہیں جائیں گے لیکن نواز شریف چھپتے پھریں گے اور اس بار تو انہیں جدہ جانے کا موقع بھی نہیں ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کا ساتھ وہ لوگ دے رہے ہیں جنہیں انہوں نے پیسہ کھلا رکھا ہے یا پھر وہ خود کرپٹ ہیں، یہ لوگ پاکستان کے نظریے کو تباہ کر رہے ہیں، اگر اسی طرح کا پاکستان بنانا تھا تو اس ملک کی ضرورت ہی کیا تھی۔ پیپلز پارٹی کے لانگ مارچ کے حوالے سے عمران خان کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کو لانگ مارچ کی ضرورت نہیں پڑے گی، پیپلز پارٹی کے لانگ مارچ تک آر پار ہو چکا ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں

جسٹس ریٹائرڈ الطاف ابراہیم قریشی نے قائم مقام چیف الیکشن کمشنر کے عہدے کا حلف اٹھالیا

جسٹس ریٹائرڈ الطاف ابراہیم قریشی نے قائم مقام چیف الیکشن کمشنر کے عہدے کا حلف اٹھالیا

اسلام آباد: جسٹس ریٹائرڈ ارشاد قیصر نے الطاف ابراہیم قریشی سے قائم مقام چیف الیکشن …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے