ان میزائلوں کو ملک, کے مشرقی حصے, جزیرہ نما, ہوڈو سے, داغا گیا

ان میزائلوں کو ملک کے مشرقی حصے جزیرہ نما ہوڈو سے داغا گیا

شمالی کوریا: یہ تجربہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان کے درمیان ویتنام میں ہونے والی ملاقات کے بعد کیا گیا تھا جو کہ بغیر کسی معاہدے کے ختم ہو گئی تھی

جنوبی کوریا کے جوائنٹ چیفس آف سٹاف نے ایک بیان میں کہا ہے کہ شمالی کوریا نے ’مقامی وقت کے مطابق صبح 09:06 سے 09:27 کے درمیان مشرقی ساحلی علاقے وانسن کے قریب جزیرہ نما ہوڈو سے شمال مشرق کی جانب قریبی ہدف کو مار کرنے والے متعدد میزائل کا تجربہ کیا ہے۔‘
انھوں نے مزید بتایا کہ ان میزائلوں نے جاپان کے سمندر کی جانب 70 سے 200 کلو میٹر تک پرواز کی۔
کم جونگ ان نے اپریل میں کیے جانے والے ‘ٹیکٹیکل گائیڈڈ ہتھیار’ کا خود معائنہ کیا تھا۔
یہ تجربہ مختلف اہداف کو نشانہ بنانے کے لیے کیا گیا تھا۔ تجزیہ کاروں کا ماننا ہے کہ یہ ہتھیار زمین، سمندر اور ہوا سے داغا جا سکتا ہے۔
تاہم یہ ابھی تک واضح نہیں کہ وہ ہتھیار میزائل تھا یا نہیں لیکن زیادہ تر مبصرین اس بات پر متفق ہیں ممکنہ طور پر یہ قریبی ہدف کو نشانہ بنانے والا ہتھیار تھا۔
گذشتہ برس کم جونگ ان نے کہا تھا کہ وہ جوہری تجربات کو روک دیں گے اور بین البراعظمی بیلسٹک میزائل کا تجربہ نہیں کیا جائے گا۔
تاہم گذشتہ ماہ سیٹلائٹ سے لی گئی تصاویر میں شمالی کوریا کی مرکزی ایٹمی تنصیبات میں حرکت نظر آئی ہے جس سے اس بات کی نشاندہی ہوتی ہے کہ شمالی کوریا بم میں اسعتمال ہونے والا تابکار مواد تیار کر رہا ہے۔
شمالی کوریا کا دعویٰ ہے کہ وہ ایسا چھوٹا ایٹمی بم تیار کر چکا ہے جو دور ہدف کو نشانہ بنانے والے میزائل میں نصب کیا جا سکتا ہے جو کہ امریکہ تک پہنچنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

یوڈسن نے اعلان کیا ہےموٹر سائیکل مارکیٹ انڈیا سے اپنا کاروبار سمیٹ رہی ہے

یوڈسن نے اعلان کیا ہےموٹر سائیکل مارکیٹ انڈیا سے اپنا کاروبار سمیٹ رہی ہے

انڈیا: امریکہ کی مقبول موٹر سائیکل بنانے والی کمپنی ہارلے ڈیوڈسن نے اعلان کیا ہے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے