لاپتہ افراد کی بازیابی کے لیئے جاری دھرنے کا تیسرا روز

لاپتہ افراد کی بازیابی کے لیئے جاری دھرنے کا تیسرا روز

کراچی: لاپتہ افراد کی بازیابی کے لیئے صدرمملکت کے گھر کے باہر احتجاج جاری ہے

کراچی سے لاپتہ افراد کے اہل خانہ کا صدرمملکت کے گھر کے باہر جاری احتجاجی دھرنا تیسرے روز میں داخل ہوگیا ہے

صدرمملکت ڈاکٹرعارف علوی کی رہائش گاہ کے باہر لاپتا افراد کے اہل خانہ گزشتہ تین روز سے احتجاج کررہے ہیں، مظاہرین میں خواتین اور بچوں کی بڑی تعداد موجود ہے۔

شدید گرمی ، حبس اور دھوپ بھی مسنگ پرسنز کے اہل خانہ کے جذبے اور استقامت کے راستے کی دیوار نا بن سکی۔

گذشتہ رات مختلف سیاسی ومذہبی جماعتوں کے علمائے کرام اور قائدین نے احتجاجی دھرنے میں شرکت کی اور خانوادہ اسیران سے اظہار یکجہتی کیا۔  مسنگ پرسنز کے اہل خانہ اپنے موقف پر اٹل ہیں کہ جب تک صدر مملکت خود مظاہرین سے مذاکرات کیلئے تشریف نہیں لاتے اور تمام لاپتہ اسیر رہا نہیں کردیئے جاتے ہمارا احتجاجی دھرنا جاری رہے گا۔

دھرنے میں شرکاء کی بڑی تعداد خواتین پر مشتمل ہے، جو اپنے پیاروں کی تصاویر اٹھائے، ان کی محفوظ واپسی یا عدالت میں پیشی کا مطالبہ کررہے ہیں۔ ان کا مطالبہ ہے کہ اگر کسی نے کوئی جرم کیا تو عدالت میں پیش کیا جائے۔

کسی بھی ناخوشگوار صرتحال سے نمٹنے کے لیئے صدر پاکستان کی رہائش گاہ پر پولیس کی بھاری نفری تعینات ہے۔

 

یہ بھی پڑھیں

سندھ بھر میں کتوں کی بھرمار کے باعث شہریوں کی زندگی کو خطرہ لاحق

سندھ بھر میں کتوں کی بھرمار کے باعث شہریوں کی زندگی کو خطرہ لاحق

کراچی: حکومت سندھ ، محکمہ صحت اور بلدیہ عظمی شہریوں کو بہتر علاج کی سہولیات …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے