فین بنگ بنگ, کو, سرعام, کبھی نہیں, دیکھا گیا تھا

فین بنگ بنگ کو سرعام کبھی نہیں دیکھا گیا تھا

فین بنگ بنگ کو اکتوبر 2018 میں مختصر وقت کے لیے چین کے شہر بیجنگ کی ایئرپورٹ پر دیکھا گیا تھا اور چہ مگوئیاں شروع ہوگئی تھیں کہ وہ جلد منظر عام پر آئیں گی

اکتوبر میں مختصر وقت کے لیے دیکھی جانے والی فین بنگ بنگ پر چینی حکومت نے ٹیکس چوری کے کیس میں جرمانہ عائد کیا تھا۔
37 سالہ فین بنگ بنگ پر چینی حکومت نے اکتوبر 2018 میں کم سے کم 12 کروڑ 90 لاکھ ڈالر کا جرمانہ اور ٹیکس عائد کیا تھا۔
فین بنگ بنگ حکومت کی جانب سے ٹیکس چوری کے مقدمات بنائے جانے کے بعد ہی لاپتہ ہوگئی تھیں۔
یہ واضح نہیں ہوسکا کہ وہ ازخود غائب ہوگئی تھیں یا انہیں حکومت نے لاپتہ کردیا تھا۔
تاہم بعد ازاں وہ مختصر وقت کے لیے دکھائی دیں تھیں اور ان ہی دنوں میں حکومت نے ان پر جرمانہ و ٹیکس عائد کیا تھا۔
فین بنگ بنگ نے عوام سے معذرت بھی کی تھی اور تسلیم کیا تھا کہ وہ ٹیکس چوری میں ملوث رہی ہیں۔
فین بنگ بنگ نے حکومتی دباؤ کے بعد معافی مانگی، کیوں کہ معافی نہ مانگنے پر انہیں کرمنل مقدمات کا سامنا کرنا پڑتا، تاہم اب وہ لگ بھگ ایک سال بعد مکمل طور پر سامنے آگئیں۔
ایونٹ کے دوران صحافیوں کے سوالات کے جوابات بھی نہیں دیے اور نہ ہی انہوں نے کسی موضوع پر کوئی بات کی۔
فین بنگ بنگ کے منظر عام پر آنے کے بعد مداحوں نے ان کی تصاویر چینی سوشل ویب سائٹ وائبر سمیت دیگر نیٹ ورکس پر شیئر کیں اور لوگوں نے ان کی واپسی پر خوشی کا اظہار کیا۔
فین بنگ بنگ نے 1999 میں کیریئر کا آغاز کیا اور انہوں نے فیشن کی دنیا میں بھی بڑا نام کمایا۔
فین بنگ بنگ سے متعلق خیال کیا جاتا ہے کہ وہ حکمران جماعت ’کمیونسٹ پارٹی‘ کی رکن بھی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

ہجرت کرتے انسانوں کا دکھ اور اس راستے میں انسانیت کی پامالی

ہجرت کرتے انسانوں کا دکھ اور اس راستے میں انسانیت کی پامالی

ہم اردو افسانے کے ایک معتبر نام سعادت حسن منٹو کی وہ کہانیاں آپ کے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے