شاعرہ، فن کارہ، معلّمہ اور فلسطینی تحریک کی سرگرم کارکن

ٹورنٹو: ایک تقریب کے دوران ان سے جب صحافی نے سوال کیا کہ آپ کو نہیں لگتا کہ بہتر ہوگا اگر آپ اپنے (فلسطینی) بچوں کو نفرت سکھانا بند کریں؟

جس کے جواب میں انہوں نے جو کہا اس نے سب کو ششدر کردیا۔ رفیف نے کہا ‘ہم سے کہا جاتا ہے کہ ہم آپ (فلسطینیوں) کے بارے میں دنیا کو بتانا چاہتے ہیں تو ہمیں ایک کہانی دیں، لیکن اس میں نسلی عصبیت مقبوضہ اور جیسے الفاظ استعمال مت کیجئے کیونکہ یہ غیر سیاسی ہے۔
انہوں نے کہا ‘ تو صحافی ہونے کے ناطے آپ خود میری مدد کیجئے آپ کو کہانی سنانے کیلئے جو ‘غیر سیاسی’ ہے۔ آج میرا پورا جسم ایک قتل عام کی داستان ہے، تو کیوں نہ آپ ہمیں غزہ کی اس خاتون کی کہانی سنائیں جسے طبی امداد کی ضرورت ہے؟ کیا تمہارے پاس اتنے ٹوٹی ہڈیوں والے اعضاء ہیں جو سورج کو ڈھک سکیں؟ مجھے اپنے مرے ہوئے لوگ دیجئے اور مجھے لوگوں کے ناموں کی فہرست دیجئے جو ایک ہزار یا دو سو الفاظ میں مکمل ہوسکے۔
آج میں قتل عام کی مجسم کہانی ہوں۔ لیکن انہیں اس بارے میں بُرا لگتا ہے، انہیں غزہ میں جانور بُرے لگتے ہیں۔ تو میں انہیں اقوامِ متحدہ کی قراردادیں اور اعدادوشمار دکھاتی ہوں، ہم مذمت کرتے ہیں، افسوس کرتے ہیں اور مسترد کرتے ہیں۔ قابض اور مقبوضہ ایک چیز نہیں ہیں۔ سو لاشیں دو سو لاشیں، ہزار لاشیں اور ان کے بیچ میں جنگی جرائم اور قتل عام۔ میں مسکراتی ہوں اور الفاظ نکلتے ہیں، غیر ملکی نہیں ہیں، مسکراتی ہوں ، دہشتگرد نہیں ہیں، اور پھر دوبارہ گنتی شروع کردیتی ہوں۔ سو لاشیں، دو سو لاشیں ہزار لاشیں۔
رفیف نے کہا کہ کیا کوئی وہاں؟ کیو کوئی سُنے گا؟ کاش میں ان کی لاشوں پر ماتم کر سکتی، کاش میں ننگے پاؤں ہر ریفیوجی کیمپ میں موجود ہر بچے کے پاس جاتی اور ان کے کان ڈھانپ سکتی تاکہ انہیں زندگی بھر بمباری کی وہ آوازیں سُنائی نہ دیں جو میں نے سنی ہیں۔
آج میں مجسم ِ قتل عام ہوں۔ آج میں بتادوں کہ آپ کی اقوامِ متحدہ کی قرار دادیں کبھی کچھ نہیں کرسکی ہیں، کوئی ایک آواز سے فرق نہیں پڑا، چاہے میری انگریزی کتنی ہی اچھی کیوں نہ ہو، لیکن میری کوئی آواز انہیں اب دوبارہ زندہ نہیں کرسکتی۔ کوئی آواز اسے ٹھیک نہیں کرسکتی۔ ہم زندگی سکھاتے ہیں، ہم فلسطینی ہر صبح اُٹھتے ہیں اور پوری دنیا کو زندگی سکھاتے ہیں۔
ان کی ایک نظم غصے کی پرچھائیاں ایک مشہور نظم ہے جو انہوں نے اپنے کینیڈا یونیورسٹی میں ایک طالب علم کے نفرت انگیز رویے کے خلاف لکھی۔

یہ بھی پڑھیں

عالمی برادری خطے میں جہاز رانی کا تحفظ کرے، سعودی عرب

عالمی برادری خطے میں جہاز رانی کا تحفظ کرے، سعودی عرب

ریاض: سعودی عرب کی وزارتی کونسل نے عالمی برادری پر زور دیا ہے کہ وہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے