فواد چوہدری الزام تراشی سے گریز کریں اور بولنے سے قبل سوچنے کا مشورہ

اسلام آباد: کابینہ کے اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے فواد چوہدری نے الزام عائد کیا تھا کہ کچھ اپوزیشن اراکین بجلی اور گیس چوری میں ملوث ہیں اور خصوصی طور پر حنا ربانی کھر اور مسلم لیگ (ن) کے شیخ روہیل اصغر کا نام لیا تھا

اپنے بیان میں حنا ربانی کھر نے وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات خبردار کیا کہ وہ اپوزیشن اراکین کے خلاف الزام تراشی سے گریز کریں اور بولنے سے قبل سوچنے کا مشورہ دیا۔
انہوں نے کہا تھا کہ سابق وزیر خارجہ بجلی چوری کے مقدمے میں ملوث ہیں اور انہوں نے اپنے خلاف کارروائی سے بچنے کے لیے 2 سال سے عدالت سے حکم امتناع لیا ہوا ہے۔
حال ہی میں وزیر اطلاعات نے چیف جسٹس سپریم کورٹ آف پاکستان کو خط لکھ کر ان کی توجہ ہتک عزت کے مقدموں پر عملدرآمد میں کمی کی جانب مبذول کرائی تھی اور درخواست کی تھی کہ وہ نیشنل جوڈیشل پالیسی ساز کمیٹی کے اگلے اجلاس میں اس معاملے کو اٹھائیں۔
اپنے خط میں فواد چوہدری نے اس معاملے کو عوام کے لیے انتہائی اہمیت کا حامل قرار دیتے اس پر فوری توجہ دینے کا مطالبہ کیا تھا اور کہا تھا کہ ہتک عزت کا موجودہ قانون پر اس طرح عمل نہیں کیا جا ہرا جس طرح کیا جانا چاہیے جس کے سبب مجرم کے احتساب میں مشکلات پیش آتی ہیں اور ان میں سے اکثریت کو وہ انصاف نہیں مل پاتا جس کے وہ مستحق ہیں۔
فواد چوہدری پیشے کے اعتبار سے وکیل ہیں اور اسی لیے انہوں نے عدالت سے درخواست کی کہ ہتک عزت کے مقدمے میں شکایات کے اندراج اور ثبوت جمع کرانے کے عمل کو متعلقہ قانون میں ترمیم کے ذریعے آسان بنایا جائے۔

یہ بھی پڑھیں

سپریم کورٹ سے یہ صادق اور امین نہ ہونے کا سرٹیفکیٹ لے چکے ہیں

سپریم کورٹ سے یہ صادق اور امین نہ ہونے کا سرٹیفکیٹ لے چکے ہیں

اسلام آباد: وزیراعظم کے معاون خصوصی احتساب شہزاد اکبر اور اٹارنی جنرل انور منصور خان …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے