افغان حکومت, کے نمائندے, آئندہ ہفتے دوحہ, مذاکرات میں, شرکت

افغان حکومت کے نمائندے آئندہ ہفتے دوحہ مذاکرات میں شرکت

واشنگٹن: طالبان ک جانب سے بھی اس بڑی پیش رفت کو تسلیم کرتے ہوئے کہا گیا کہ افغان حکومت کے کچھ حکام ان مذاکرات میں حصہ لیں گے لیکن وہ ریاستی نمائندوں کے طور پر نہیں بلکہ اپنی ذاتی حیثیت میں شرکت کریں گے

امریکی نمائندے زلمے خلیل زاد کا کہنا تھا کہ تھا کہ ‘ افغان صدر اور دیگر نمائندوں سے اس بات پر تبادلہ خیال ہوا کہ کس طرح دوحہ میں آئندہ ہفتے ہونے والے بین الافغان مذاکرات کو یقینی بنایا جائے، جس میں افغان حکومت اور وسیع سوسائٹی کے نمائندگان شرکت کریں گے جو مذاکراتی عمل کو تیز کرنے کے ہمارے مشترکہ مقصد کو آگے بڑھا سکتے ہیں’۔
امریکا اور طالبان کے درمیان قطر کے دارالحکومت دوحہ میں امن مذاکرات کے 6 دور پہلے ہی ہوچکے ہیں۔
بیان میں طالبان نے واضح کیا کہ ملاقات میں شرکا صرف اپنی ‘پالیسیز اور خیالات’ کا دوسروں سے تبادلہ خیال کریں گے اور ‘اگر حکومت سے تعلق رکھنے والے اراکین شرکت کریں کرتے ہیں تو وہ اپنی ذاتی حیثیت میں آئیں گے ریاستی نمائندے کے طور پر نہیں’۔
بیان میں یہ بھی دعویٰ کیا کہ کچھ افغان حکام نے گزشتہ ملاقاتوں میں بھی شرکت کی تھی لیکن وہ کابل حکومت کے نمائندے کے طور پر نہیں تھی۔

یہ بھی پڑھیں

افغان صدر پر چیف ایگزیکٹیو کا الزام

افغان صدر پر چیف ایگزیکٹیو کا الزام

افغانستان کے چیف ایگزیکٹیوعبداللہ عبداللہ نے صدر اشرف غنی پر انتخابی مہم کے دوران سرکاری …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے