کسی ملزم کو کیس, میں پیش رفت کے بغیر مسلسل, قید میں, نہیں رکھا, جا سکتا

کسی ملزم کو کیس میں پیش رفت کے بغیر مسلسل قید میں نہیں رکھا جا سکتا

لاہور: نیب کی جانب سے ملزم علیم خان کو احتساب عدالت میں پیش کیا گیا، اس موقع پر فاضل جج نے تفتیشی افسر سے استفسار کیا ‘تحقیقات مکمل ہوئی یا نہیں

تفتیشی افسر نے عدالت کو بتایا کہ انویسٹی گیشن ہورہی ہے اور مزید وقت درکار ہے۔
فاضل جج نے کہا ‘ابھی تحقیقات ہورہی ہے، کب ریفرنس دائر کریں گے اور کب چالان آئے گا، اب تک تفتیشی رپورٹ کا کیا بنا ہے’۔
نائب تفتیشی افسر نے اس موقع پر کہا کہ کیس کو انکوائری سے تحقیقات کے مرحلے میں داخل کرنے کی منظوری دے دی گئی ہے، کیس کے مرکزی تفتیشی افسر کراچی گئے ہوئے ہیں۔
نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ تفتیش مکمل ہوتے ہی ریفرنس فائل کر دیا جائے گا جس پر جج احتساب عدالت نے کہا کہ کسی کو بلاوجہ قید میں نہیں رکھا جانا چاہیئے۔
نیب پراسیکیوٹر سے مکالمے کے دوران فاضل جج نے کہا ‘آپ وقت ضائع نہ کریں اور بندے کو جیل میں رکھ کر گلائیں سڑائیں نہیں’ جس پر نیب پراسیکیوٹر نے کہا ہم ملزم کو 90 روز تک رکھ سکتے ہیں جس پر عدالت نے کہا ‘کیا یہ ضروری ہے کہ ملزم کو 90 روز تک رکھا جائے، قانون واضح ہے کہ کسی ملزم کو کیس میں پیش رفت کے بغیر مسلسل قید میں نہیں رکھا جا سکتا’۔

یہ بھی پڑھیں

مچھر کے کاٹنے سے ہونے والے ڈینگی بخار نے وبا کی صورت اختیار کرلی

مچھر کے کاٹنے سے ہونے والے ڈینگی بخار نے وبا کی صورت اختیار کرلی

پنجاب: سرگودھا میں 50 سے زائد مقامات پر ڈینگی لاروا کی نشاندہی ہوچکی ہے جس …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے